Oops! It appears that you have disabled your Javascript. In order for you to see this page as it is meant to appear, we ask that you please re-enable your Javascript!

قلم کار کا سفر

Print Friendly, PDF & Email

Rizwan Zafar Gurmaniمجھے اک مؤقر روزنامے میں ہفتہ وار کالم لکھتے تقریبا اک سال ہونے والا ہے اکثر دوست مجھ سے سوال پوچھتے ہیں کہ لکھاری بننے کیلیے ہمیں کیا کرنا چاہییے
میرا ذاتی خیال ہے کہ لکھنے کیلیے پڑھنا بہت ضروری ہے مطالعہ آپ کے ذہن کی ورزش ہے کتب بینی سے آپ کی سوچ کے در وا ہوتے ہیں کتاب آپ کے علم میں اضافے کا سبب تو بنتی ہی ہے لیکن اس کے ساتھ ساتھ آپ کی سوچنے کی استعداد کو بڑھاتی ہے
مطالعہ آپ کے دنیا کو دیکھنے کے نظریے کو تبدیل کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے
مطالعہ آپ کو غور و فکر پر اکساتا ہے آپ کا نظریہ بناتا ہے
تاریخ فلسفہ بڑی تحریکیں انقلاب کی داستانوں کے ساتھ عظیم اور نامور لوگوں کی آپ بیتیاں آپ کو دنیا کے حالات و واقعات کو سمجھنے میں مدد دیتے ہیں جنگوں کی روداد کا مطالعہ ممالک کے درمیان تعلقات دنیا میں رائج حکومتی ڈھانچے جغرافیائی اہمیت عالمی مسائل اور دیگر کے بارے میں آپ کے خیالات و افکار کو بہتر بنانے میں معاون ہوتا ہے
کسی بھی موضوع پہ لکھنے کیلیے سب سے بنیادی چیز اس موضوع کے متعلق آپ کی معلومات ہوتی ہیں جو ظاہر ہے مطالعہ کے بغیر ناممکن ہے اس کے بعد الفاظ کا چناؤ لکھاری کو لکھتے وقت یہ چیز مدنظر رکھنی ہوتی ہے کہ وه عام فہم الفاظ و زبان کا چناؤ کرے جو ہر قسم کے قاری کیلیے قابل فہم ہو
نئے لکھاریوں کو چاہیے کہ وه کسی بھی واقعے خبر یا مضمون کو پڑھنے کے بعد اپنے الفاظ میں لکھنے کی مشق کریں پھر اس کا اصل مضمون کے ساتھ موازنہ کریں اس کے علاوه اپنی سوچ کو وسعت دینے کیلیے کسی بھی چیز کے مختلف پہلووں پہ غور کریں
آپ اک بال پین کو مثال طور پر لے لیں اور کوشش کریں کہ اس کے متعلق آپ کیا لکھ سکتے ہیں بال پین کی شکل و صورت رنگ کمپنی قیمت کس رنگ میں لکھتا ہے کہاں کہاں دستیاب ہے کتنا دیرپا ہے وغیره وغیره
میرا ماننا ہے کہ کسی بھی لکھاری کی تحریر اگر پراثر نہیں تو اس کا کوئی فائده نہیں اور تحریر میں اثرانگیزی کیلیے سچائی اور غیر جانبداری بنیادی اجزائے ترکیبی ہیں
میرے ایک اہل علم دوست ملک قمرعباس اعوان نے ایک دن مجھے کال کر کے انٹرنیٹ پر موجود بلاگ سائیٹ پہ نئے لکھاریوں کو درپیش مسائل سے آگاه کیا اور نئے لکھنے والوں کو ایک پلیٹ فارم مہیا کرنے کی اپنی خواہش کا اظہار کیا میں نے پاکستان یونین آف کالمسٹ کے جنرل سیکریٹری اور قمر اعوان اور میرے مشترکہ دوست صدیف گیلانی سے بات کی اور یوں ہم تینوں نے مل کر اپنی ویب سائٹ کے منصوبے پر کام کا آغاز کیا ہم تینوں نے اپنے دوستوں سے مشوره کیا اورعامر راہداری ذیشان نقوی محترمہ زرینہ اشرف سمیت سب دوستوں نے حوصلہ افزائی کی
ہمارے لیے استاد کا درجہ رکھنے والے سینئر صحافی اور کالم نگارجناب حیدر جاوید سید نے ہماری درخواست پر ایڈیٹر کے فرائض سنبھالنے پر اپنی آمادگی ظاہر کی تو ہمارے حوصلے مزید بلند ہو گئے۔
سینئر صحافی اور کالم نگار جناب محمد عامر حسینی بھائی جو اک انٹرنیشنل جریدے کے ساتھ منسلک ہیں نے انتہائی مصروفیت کے باوجود کمال شفقت کا مظاہره کرتے ہوئے قلم کار کے ایڈیٹوریل بورڈ کے ہیڈ کے طور پر اپنی خدمات پیش کیں
ٹیکنیکل ضروریات مکمل ہونے کے بعد 3 اور 4 شعبان کی سعادت بھری درمیانی شب کو ہماری ویب سائیٹ کی لانچنگ ہوئی جس کیلیے ہمیں معروف شاعره اور فصیل ضبط کی مصنفہ محترمہ فرح رضوی بینکنگ جیسے خشک شعبہ میں خدمات سرانجام دینے والی ادیبہ محترمہ ام رباب نوجوان شاعره محترمہ سحر بخاری ،اہل علم اور مزاح میں منفرد مقام رکھنے والے زاہد شجاع بٹ نوجوان صحافی توقیر ساجد، کری ایٹو رائٹر محترمہ ثناء بتول سمیت کئی دوستوں نے اپنی تحاریر ارسال کیں
ویب سائیٹ لانچ ہونے کے بعد کئی ٹیلنٹدلکھاریوں نے اپنی متاثر کن تحاریر ارسال کیں جن میں محترمہ آمنہ احسن، جری رضا، سلیم خان رند، معظم جتوئی محمود فیاض و دیگر شامل ہیں
سینئر صحافی اور کالم نگار رؤف کلاسره صاحب نے اپنے کالم عنایت کر کے حوصلہ افزائی کی اور یوں قلمکار اپنے سفر پر گامزن ہے
بطور ممبر ایڈیٹوریل بورڈ قلمکار میں اپنے تمام لکھنے والوں کا مشکور ہوں اور نئے لکھنے والوں کو خوش آمدید کہتاہوں. امید ہے ہم سب مل کر قلمکار کو کامیاب اور معیاری بلاگ ویب سائٹ بنائیں گے انشاءاللہ

Views All Time
Views All Time
1583
Views Today
Views Today
1
یہ بھی پڑھئے:   ناول کی دنیا

رضوان گورمانی

رضوان ظفر گورمانی ایک قومی اخبار میں کالم لکھتے ہیں۔ تعلق کوٹ اددو سے ہے۔

3 thoughts on “قلم کار کا سفر

  • 19/05/2016 at 10:51 صبح
    Permalink

    خدا کرے کہ آپ لوگوں کے خلوص اور جزبے کی بدولت وہ دن جلد آئے جب قلمکار ، ادب کی تمام شاخوں کی نمائندہ اور واحد ویب سائٹ کے طور پر پہچانی جائے۔۔ آپ لوگوں کی ترقی اور عزت ہی ہماری ترقی اور عزت ہے

    Reply
  • 19/05/2016 at 10:58 صبح
    Permalink

    شکریہ جناب رضوان ظفر گورمانی صاحب
    کلم کار ویب سائیڈ بنانے کا
    نوجوان لکھاریوں کیلئے بہت بڑی خوشخبری ہے
    آپ لوگوں نے ہم نئے لکھنے ولوں کے حوصلے بلند کیئے ہئیں
    شاھد راسب مانہ احمدانی ڈیرہ غازی خان

    Reply
  • 19/05/2016 at 1:21 شام
    Permalink

    Best of luck.
    My best wishes always with you.
    Hope fully You will be succeeded very soon.
    Furthermore , just reauired a your attention.

    Reply

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: