Oops! It appears that you have disabled your Javascript. In order for you to see this page as it is meant to appear, we ask that you please re-enable your Javascript!

صادقِ آلِ محمدؑ

Print Friendly, PDF & Email

میری نانی مرحومہ بڑی مومنہ خاتون تھیں۔ واجبی سی دنیاوی تعلیم تھی اور دینی تعلیم اُن کی یہ تھی کہ ہر مشکل کا حل ایک نمازِ حاجت، کشمکش کا حل استخارہ، کڑکتی سردی ہو یا سخت گرمی، اپنی زندگی کے آخری ایام تک باقاعدگی سے فجر کے وقت بیدار ہوجانا، رات آٹھ نو بجے تک سو جانا البتہ اگر محرم میں رات کے پچھلے بہر ٹی وی یا کمیوٹر سے مجلس میں مصائب کی آواز آجائے تو کمرے سے چہرے پر دوپٹہ رکھے باہر آنا اور زار و قطار رونا شروع کردینا، محرم میں ہر روز شربت پر نذر دلوانا، کبھی کسی حاجت مند کیلئے معجزہِ سیدہؑ کی منت مان لینا، قران کے بعد جن کتابوں کا نام اُنہیں معلوم تھا وہ شاید تحفۃ العوام تھی، آیت اللہ محسن الحکیمؒ کا نام بھی اکثر لیا کرتی تھیں۔ قران سے یاد آیا کہ اُنہیں خواب میں جنت میں اُن کا گھر دکھایا گیا تھا جس میں دو کمرے تھے، بتایا گیا کہ ایک کمرہ تلاوِت قران کیلئے ہے۔ مجلس جانے کی جلدی ہوتی تھی اور فورا رکشہ مل جایا کرتا تھا وہ اُن کے لئے یہ مولاؑ کا معجزہ ہوتا تھا۔ گلی میں رہنے والی کیا سُںنی، کیا اہلیحدیث اور کیا شیعہ۔ میں نے سب خواتین کو اُن سے نمازِ حاجت پڑھنے کی درخواست کرتے دیکھا تھا، جس پر وہ کمال اعتماد کے ساتھ کہا کرتی تھیں کہ جب حاجت پوری ہو تو ہمیں بتا دیا کرو، تاکہ ہم منت بڑھا دیں، یعنی نمازِ شکرانہ پڑھ دیں۔

یہ نانی کا مختصر سا تعارف تھا۔ چونکہ ہر نواسے کی طرح، میرا بھی بہت قریبی اور گہرا تعلق رہا اس لئے اپنی تمام تر نالائقی اور لاپرواہی کے باوجود اُن کی سکھائی کچھ باتیں اب بھی یاد رہ گئیں۔

میں بہت چھوٹا تھا تو نانی نے کہا کہ جب کھانا کھانے سے پہلے بسم اللہ پڑھا کرو تو اُسکے بعد امام جعفر صادق علیہ السلام بھی کہہ دیا کرو۔ میں اتنا چھوٹا تھا کہ وجہ جاننے کی ضرورت محسوس نہ ہوئی، بس اُنہوں نے اتنا ہی بتایا تھا کہ امام جعفر صادقؑ نے بہت بڑا کام کیا ہے شیعوں کیلئے، اس لئے برکت کیلئے اُن کا نام ضرور لینا چاہئے۔ اسے اُن کی عقیدت کہہ لیں یا مودت کے اظہا ر کا طریقہ۔ بچپن میں یہ عادت ایسی مضبوط ہوگئی کہ میں آج بھی اکثر کھانے سے پہلے بسم اللہ کہتا ہوں تو امام جعفر صادق علیہ السلام بے اختیار خود ہی زبان سے ادا ہوجاتا ہے۔ میں ہی نہیں، میرے بہن بھائی بھی ایسا ہی کرتے ہیں۔ جانتا تو ابھی بھی کچھ نہیں ہوں، لیکن جو چند باتیں مجالس میں سنتا آیا ہوں یا چند کتابوں میں پڑھی ہیں، تو اُن کی بنیاد پر اب یہ وجہ سمجھنے میں مشکل نہیں ہوتی کہ میری نانی مرحومہ کھانے سے پہلے بسم اللہ کے بعد امام جعفر صادقؑ کہنے کو کیوں کہتی تھیں۔

سادات شیعوں اور سنیوں دونوں میں پائے جاتے ہیں۔ نقوی، کاظمی زیدی، رضوی، جعفری، عابدی، باقری، حسنی، حسینی، تقوی، موسوی۔ یہ شیعوں میں سادات کے ناموں کے ساتھ ان کے شجرہ کی مناسبت سے یہ الفاظ لکھنے نظر آتے ہیں۔ پھر غیر سادات شیعہ ہوتے ہیں جو مختلف ذات و برادری سے تعلق رکھتے ہیں۔ پاک و ہند ہو، ایران ہو، عراق ہو یا خطہِ عرب کا کوئی بھی ملک۔ ہر جگہ شیعوں میں سادات اور غیرِ سادات کی یہی تقسیم ہوتی ہے۔ البتہ کوئی بھی شیعہ، وہ چاہے سید ہو یا غیر سید، وہ جعفری ضرور ہوگا۔ یہ نسبت امام جعفر صادقؑ کی وجہ سے ہے۔ وہ نسبت جو ایک رضوی کو بھی جعفری شیعہ بناتی ہے اور ایک غیر سید کو بھی۔ پوری دنیا کے اہلِ تشیع آج فخر سے خود کو جعفری شیعہ کہلاتے ہیں۔

یہ اُس محنت کا نتیجہ ہے جس کی بنیاد مدینہ میں امام سجادؑ نے رکھی، جسے اُن کے فرزند اور اہلیبیت کے پانچویں امام، امام باقرؑ نے جس کی بنیادیں مستحکم کیں اور پھر امام جعفر صادقؑ نے اس کو پروان چڑھاتے ہوئے اُس مقام تک پہنچا دیا کہ اُن کی فقہ، یعنی مکتبِ اہلیبیتؑ کو فقہ جعفریہ کے نام سےجانا جاتا ہے۔ یہ امام جعفر صادقؑ کا ہی ہم پر احسان ہے جو قال الصادقؑ اور قال الباقرؑ سے مزئن مستند کتب کا ایسا علمی سرمایہ ہمارے پاس موجود ہے جو قیامت تک کیلئے کافی ہے۔ یہ امام جعفر صادقؑ کے پینسٹھ سالہ دورِ امامت کا فیض ہے جو آج ایسے منظم و مستند علمی ذخیرے کی صورت جاری ہے۔ یہ پینسٹھ سالہ دور وہی دور تھا جس میں زید شہیدؒ کے انقلاب کا واقعہ رونما ہوا، جو کامیاب نہ ہوسکا اور اُن کی دردناک شہادت پر منتج ہوا۔ انہی پینسٹھ سالوں میں حضرت نفسِ ذکیہ کے قیام اور شہادت کا واقعہ رونما ہوا۔ اسی دور میں بنو اُمیہ اور بنو عباس کی جنگ ہوئی اور ملوکیت کا سلسلہ بنو اُمیہ سے بنو عباس کے قبصے میں آیا۔

ہمیشہ سنتے آئے ہیں کہ مدینہ میں قائم امام جعفر صادقؑ کے درس میں بڑے بڑے فقہا پڑھتے رہے جنہیں امام جعفر صادقؑ کا شاگرد بھی کہا جاتا ہے۔ اگرچہ میرا مقصد کسی بھی اختلافی نکتے کو بیان کرنا نہیں لیکن بحیثیت ایک کم علم انسان، یہ سوال میرے ذہن میں آتا ضرور ہے کہ کیا وجہ ہے کہ امام باقرؑ سے لیکر امام جعفر صادقؑ کے علمی و تحقیقی دور تک اور پھر امام موسی کاظمؑ کے دور تک، بہت سے نامور محدثین موجود تھے لیکن حیرت انگیز طور پر ان تینوں ہستیوں سے مروی شاید ہی کوئی روایت ان محدیثین کی مرتب کردہ کتب میں پائی جاتی ہو۔ حالانکہ حقیقت یہ ہے کہ یہ ہستیاں، بالخصوص امام جعفر صادقؑ خاموش نہیں بیٹھے ہوئے تھے، وہ ہزاروں شاگردوں کو تعلیم دے رہے تھے، روایات بیان کر رہے تھے۔ ان شاگردوں میں ماہرِ کیما، جابر بن حیان بھی شامل تھا۔

معروف غیر شیعہ کتب چاہے امام جعفر صادقؑ سے متعلق کچھ زیادہ بیان نہ کرتی ہوں لیکن فرانس کی ریسرچ کمیٹی آف سٹروسبرگ نے امام جعفر صادقؑ، ایک عظیم مسلمان سائنسدان و فلسفی کے عنوان سے مقالہ لکھ کر بہت مفید کام انجام دیا ہے۔ یہ مقالہ فرانسیسی زبان سے فارسی میں اور پھر فارسی سے انگریزی میں ترجمہ ہوا ہے اور مطالعے کیلئے اہلیبیت لائبیری کی ویب سائٹ پر موجود ہے۔ مقالے میں امام جعفر صادقؑ کا طبیعات، فلکیات، فلسفہ، لٹریچر، روشنی اور کائنات کے اغاز سے متعلق معرکۃ الاراء کلام موجود ہے۔ یہ بتانے کی ضرورت نہیں کہ یہ تحقیق غیر مسلموں نے کی ہے۔

پیغمبرِ اکرم(ص) کے بعد اگر کسی شخصیت کو صادق کے لقب سے یاد کیا گیا، تو وہ آپ ہی کے چھٹے وارث امام جعفر صادقؑ ہیں۔ جعفر کا مطلب جنت کی ایک رواں نہر اور صادق کا مطلب سچا۔ یعنی یہ سچ کا فیض پھیلاتی ہوئی جنت کی ایک نہر ہے۔

میں کوئی عالمِ دین یا محقق نہیں ہوں، میں نے تو علم و فضل کے اِس عظیم باب کی بارگاہ میں یہ چند ٹوٹے پھوٹے لفظ اس اُمید کے ساتھ پیش کیے ہیں کہ شاید مجھ کم علم پر بھی صادقِ آلِ محمدؑ کی نظر کرم ہوجائے اور میں بھی کچھ سیکھ سکوں۔ میں اسناد کی چھان پھٹک کا ماہر بھی نہیں کہ یہ فیصلہ کر سکوں کہ کون سی روایت مستند ہے۔ لیکن ایک روایت کہیں سنی تھی جس کا مفہوم تھا کوئی محبِ اہلیبیتؑ جب کسی سے علمی بحث کرے اور اُسے کسی ایسے سوال کا جواب دینا مقصود ہو، جس کے بارے میں اُس کے ذہن میں کوئی فوری دلیل نہ ہو تو کوئی ہے جو اُسے دلیل اور جواب ڈھونڈنے میں مدد کردیتا ہے۔ یہ مددگار صادقِ آلِ محمدؑ ہے۔ میں بہت گناہگار انسان ہوں، لیکن یہ تجربہ مجھے بہت بار ہوا۔

آئمہ اہلیبیتؑ میں سے امام جعفر صادقؑ نے سب سے زیادہ عمر پائی، یعنی پینسٹھ برس۔ بلاخر اُنہیں بھی عباسی خلیفہ ملعون منصور دوانقی نے زہر دیا۔ امامؑ کی زوجہ حمیدہ خاتونؒ سے امام جعفر صادقؑ کے صحابی ابو بصیر نے تعزیت کرتے ہوئے امامؑ کی وصیت سے متعلق پوچھا تھا۔ جس پر حمیدہ خاتونؒ نے بتایا تھا کہ امامؑ نے آخری وقت ہم سب کو اپنے قریب بلا کر فرمایا تھا کہ میرے چاہنے والے یہ جان لیں کہ نماز کو حقیر سجھنے والوں کو ہماری شفاعت نصیب نہ ہوگی۔

میں نے یہ بھی بہت بار سنا ہے کہ کسی نے امامؑ سے دریافت کیا تھا کہ کیا وجہ ہے جو حسینؑ کا نام سنتے ہی اُن کے چاہنے والے کی آنکھ میں آنسو آجاتا ہے؟ جس پر امامؑ نے جواب دیا تھا کہ دراصل محبانِ اہلیبیتؑ کی تخلیق کی وقت اُن کی مٹی میں ایک چٹکی خاکِ شفاء بھی شامل کردی جاتی ہے۔ لہذا جیسے ہی کوئی محبِ اہلیبیتؑ حسینؑ کا نام سنتا ہے، اس خاکِ شفاء کی وجہ سے غم سے مغلوب ہوجاتا ہے اور اُس کی آنکھ میں آنسو آجاتے ہیں۔

امامؑ سے اُن کے ایک چاہنے والے نے اپنی مالی تنگدستی کا ذکر کیا تھا کہ آقا میں بہت پریشان ہوں۔ جس پر امامؑ نے جواب دیا تھا کہ نہیں، تم تو بالکل غریب نہیں ہو، بلکہ بہت امیر ہو۔ اُس شخص نے حیران کو استفسار کیا تھا کہ مولاؑ میں سخت مالی پریشانی کا شکار ہوں اور آپ فرما رہے ہیں کہ میں غریب نہیں ہوں۔ جس پر امامؑ نے اُس سے فرمایا تھا کہ تم ہم آلِ محمدؑ سے محبت کرتے ہو؟ اُس نے جواب دیا جی مولاؑ میرے ماں باپ آپ پر قربان۔ تو کیا تم یہ محبت کسی قیمت پر فروخت کرنا چاہو گے؟ اُس شخص نے تڑپ کر جواب دیا، ہرگز نہیں مولاؑ۔ حبِ اہلیبیتؑ تو کسی قیمت پر فروخت نہ کروں گا۔ جس پر امامؑ نے مسکراتے ہوئے کہا کہ ایسی قیمتی دولت کے ہوتے ہوئے خود کو غریب کہتے ہو؟

شہادتِ صادقِ آلِ محمدؑ پر یہ ٹوٹے پھوٹے الفاظ اس اُمید کی ساتھ مولاؑ کی بارگاہ میں پیش کررہا ہوں کہ وہ مجھ گناہگاہ، کم علم اور عاجز انسان کو اپنی شفاعت سے محروم نہ کرینگے۔ میں گناہگار سہی لیکن اتنی نسبت تو ہے ہی کہ بچپن سے کھانے کا پہلا لقمہ کھانے سے پہلے بسم اللہ کے بعد آپؑ کا نام لیتا آیا ہوں۔

Views All Time
Views All Time
684
Views Today
Views Today
1
یہ بھی پڑھئے:   آخری عشرے کا اعتکاف

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: