آج کل ہم ایک دوسرے سے اجنبی ہوتے جا رہے ہیں

Print Friendly, PDF & Email

وہ وقت بھی کیا اچھے دنوں پر مشتمل تھا جب ہمیں یہ تو پتہ ہوتا تھا کہ ہمارے ہمسائے میں کون رہتا ہے نہ کہ صرف یہ جاننا کہ ہماری گلی میں سامنے، پیچھے، دائیں، بائیں گھر ہیں یا نہیں۔ مگر آج کل ہم ایک دوسرے سے اجنبی ہوتے جا رہے ہیں۔

ناصرہ نے اپنی ساتھی استانی خورشید سے سکول میں لنچ وقفہ کے دوران بات کرتے ہوئے کہا کہ “ہمارے بچپن میں ہمیں یہ بھی پتہ ہوتا تھا کہ ہمسائے کا نام کیا ہے، وہ کیا کاروبار کرتے ہیں، ان کی کیا سرگرمیاں ہیں۔ اور یہ سب بھی بغیر کسی کے پوچھے سب کو ایک دوسرے بارے پتہ چل جاتا تھا”۔ ناصرہ نے اس دن دوسری دفعہ ماضی کے جڑے ہوئے معاشرہ کو یاد کرتے ہوئے آج کے لاتعلق اور بےحس معاشرہ پر شکایت کی۔ وہ دن اس وجہ سے بھی ان کے لئے اس موضوع کو درمیان لایا تھا کیونکہ ناصرہ کے ہمسائے میں پچھلے 26 سالوں سے مقیم بوڑھی عورت 95 سال کی عمر میں مردہ پائی گئی تھی جبکہ کسی ایک کو بھی 5 ہفتوں کے دوران اس کا علم نہیں ہو سکا تھا۔ یہ سوچ کر ہی غصہ کی شدید لہر ناصرہ کے دل و دماغ میں اتر جاتی تھی کہ آج کی بےحس، لاتعلق زندگی کیسے اس کی ناظم آباد والی 60 فٹ والی گلی میں رچ بس گئی جو کبھی بھرپور زندگی، ہلہ گلہ اور میل جول رکھنے والی چھوٹی سی سوسائٹی تھی جہاں بچے ہر وقت گھروں سے باہر کرکٹ کھیلتے رہتے تھے جس میں چار سے پانچ ٹیموں کے روزانہ کرکٹ ٹورنامنٹس ہوا کرتے تھے۔

یہ بھی پڑھئے:   تاریخی تناظر اور لاہور شہر کا پانی - اکرم شیخ

جب کرکٹ نہیں ہوتی تھی تو بچے ہاکی کی ٹیمیں بنا کر ٹورنامنٹ کھیلتے تھے یا جب رت بدلتی تو فٹ بال کھیلا جاتا۔ لڑکیاں بھی پیچھے نہیں تھیں، وہ بھی گڑیوں کی شادی سے لے کر سٹاپو، بیڈمنٹن اور سائیکلنگ کیا کرتی تھیں۔ وہ وہیں پلی بڑھی تھی مگر وقت نے کیسے پلٹا کھایا کہ یہ سب کچھ بدل گیا اور لوگ ایک دوسرے سے جیسا کہ بہت لاتعلق ہی ہوکر رہ گئے تھے۔ اس نے اپنا سر مایوسی میں ہلایا۔

خورشید اپنی دوست کی اس کیفیت اس کے اضطراب اور اس کی دکھ بھری باتوں سے بہت متاثر تھی۔ اس نے ناصرہ سے پوچھا کہ “اس بوڑھیا کا نام پتہ اور فیملی بیک گراؤنڈ کیا تھا ویسے”

ناصرہ نے کہا “پتہ نہیں، کون تھی، کبھی پوچھا ہی نہیں”

Views All Time
Views All Time
492
Views Today
Views Today
2

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: