اماں کی چپل

Print Friendly, PDF & Email

ویسے تو ہر علاقے میں اس علاقے کے لحاظ سے چپل ہوا کرتی ہے لیکن ایک چپل جس کو کچھ لوگ ہوائی چپل تو کچھ قینچی جوتی بھی کہتے ہیں تقریبا ہر علاقے میں پائی اور کھائی جاتی تھی۔اس کا رنگ کالا اور نیچے میز رنر کی گیم جیسا نقشہ بنا ہوتا تھا۔ میری عمر کے تقریبا ہر بزرگ نے اپنے بچپن میں یہ چپل ضرور چکھی ہوگی۔ کیونکہ اس وقت کی اماں حضور یہ چپل استعمال کم اور کھلاتی زیادہ تھیں۔ اگر اس کے ذائقے کی بات کریں تو یہ جتنے منہ اتنی باتوں جیسا ہی ہے ہر ایک کا اپنا اپنا ذائقہ ہوتا ہے اب چونکہ میں نے کھائی ہوئی ہیں تو میں اس کے ذائقے کے بارے اتنا ہی کہوں گا کہ اس کا ذائقہ کڑوا ہوتا ہے اور اتنا کڑوا کہ اس کا ایک چمچ ہماری میٹھی میٹھی شرارتوں سے بھری پلیٹ میں کرواہٹ ڈالنے کیلئے کافی ہوا کرتا تھا۔

کرواہٹ کے بارے اس دور کے حکیموں کا کہنا تھا کہ کڑوی چیز کے کھانے سے خون صاف ہو جاتا ہے شاید اسی لیے ہماری اماں ہم کو ہمارے بچپن میں خارش کے خاتمے کیلئے صافی (ایک کڑوا شربت جو کہ خارش کی دوائی کے طور پہ استعمال کیا جاتا تھا) کا ایک چمچ بمعہ چپل دیا کرتی تھیں۔ ان دو کے مکسچر کی وجہ پوچھتے تو ازلوں سے چارپائی پہ لیٹے ہمارے دادا حضور ہمیں بتاتے کہ پتر صافی شربت خون کو تروتازہ رکھتا ہے اور چپل جسم کو۔ ان کے علاوہ اگر ہم اماں کی چپل کے مزید فوائد کا تذکرہ کریں تو اس میں اول الزکر فائدہ ہمیں یہ ہوتا تھا کہ چھٹیوں کے بعد جب ہم سکول واپس جاتے تو ہمارے پاس سکول کی چھٹیوں کا کام مکمل ہوا کرتا تھا۔ رات کے کھانے میں اگر بینگن یا ٹینڈے بھی پکے ہوتے تو ہم ایسے خوشی خوشی کھاتے جیسے کہ گوشت یا کھیر کھاتے ہیں۔

یہ بھی پڑھئے:   سوشل میڈیا ایک بڑی طاقت

اور تیسرا یہ کہ ہماری بہن اماں کی اس چپل کی بدولت ہماری شرارتوں سے ٘محفوظ ہو جایا کرتی تھی۔ چپل میں ہیری پوٹر کی چھڑی سے زیادہ جادو ہوا کرتا تھا کیونکہ جب ہماری اماں حضور دور سے پنجابی کے منتر تنتر پڑھ کر ہماری طرف پھینکتی اور جب ہمیں لگتی تو ہمارے ہنستے مسکراتے چہرے کے تاثرات اور جگہ مخصوصہ کے خدوخال یکسر بدل جایا کرتے تھے۔ اس کے علاوہ ہماری اماں اپنی طلسمی چپل سے ہمارے سب داغ صاف کیا کرتی تھیں ہمیں آج بھی یاد ہے جب ایک دفعہ ہم اپنے سفید کاٹن کے سوٹ میں نمک آلود جامن (چوری شدہ) ڈال کر دوستوں کے ساتھ گپا گپ کر کے گھر لوٹے تو پھر میں جانتا ہوں یا میرا اللہ کے اماں نے صابن و صرف استعمال کیے بنا قمیض پہ لگے وہ جامن کے داغ کیسے صاف کیے تھے۔ نخرے بازی یا کوئی شرارت کرنے کا سوچتے تو آنکھیں سیدھا اماں کے پیروں کی طرف جاتیں اور جب اس بات کی تسلی ہو جاتی کہ اماں ننگے پاوں ہے تو کر لیتے اور اگر پاوں میں یا قریب پڑی ہو تو شرارت کے بعد والے معاملے کی منظر کشی کر کے اس شرارت سے توبہ کر لیتے۔

ہاں البتہ جب ہم اپنے ننھیال ہوتے تو اس وقت اماں کے پیروں میں چپل کی جگہ ایک نئی جوتی ہوا کرتی تھی جس کے ٹوٹنے کا اماں کو ہر وقت خدشہ لگا رہتا تھا تھا اور اماں کے اس خدشہ کا ہم بھرپور فائدہ اٹھاتے تھے اور چھٹیوں کے ختم ہو جانے کے بعد کلاس روم میں بیٹھ کر اپنے ان دوستوں کو ننھیال میں کی گئی شرارتوں کے قصے مزے لے لے کر ضرور سناتے تھے جو کہ ہمیں اماں کا ڈمرو کہہ کر بلاتے تھے۔ اس طعنہ کا غصہ تو بہت آتا تھا لیکن پھر ہم یہ سوچ کر خاموش ہو جاتے کہ چلو اچھا ہے ان کو یہ نہیں پتا کہ اصل ڈمرو ہے کون ورنہ سوچو ہمارے ابا حضور پہ کیا بیتتی۔ تھوڑے بڑے ہوئے تو برادر ملک چائنہ نے ہمارے مسئلہ کو بھانپتے ہوئے ایک ایسی چپل تیار کی کہ جس میں جادو بلکل بھی نہ تھا اور اگر تھا بھی تو اس کا اثر الٹا اماں کے بازووں پہ ہوتا تھا۔ وقت بدلا ، تعلیم بڑھتی گئی، بچے سیانے ہو گئے تو انہوں نے ماوں کو ممی کے روپ میں دھار کر ان کے ہاتھوں سے چپل چھین کر اسی سائز کا موبائل تھما دیا ہے اور پاوں میں سینڈل ڈال دی ہے ۔۔۔ نہ رہے گا بانس نہ بجے گی بانسری۔ اسی وجہ سے تو آج کل یہ بات مشہور ہے کہ کامیاب مرد کے پیچھے ایک عورت کا ہاتھ ہوتا ہے حالانکہ پہلے وقتوں میں کامیاب مرد کے پیچھے اماں کی چپل ہی ہوا کرتی تھی۔ بقول بقلم خود  شاعر کہ

یہ بھی پڑھئے:   دو لاکھ والی کتاب

چپل اماں کی میں وہ تاثیر دیکھی
بدلتی بچوں کی پھر تقدیر دیکھی

Views All Time
Views All Time
421
Views Today
Views Today
3

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: