Skip to Content

Qalamkar | قلم کار

جہالت، ظلم اور ناانصافی کے خلاف برسرپیکار

ہمسفر کی یاد میں – طارق جاوید مشہدی

ہمسفر کی یاد میں – طارق جاوید مشہدی
Print Friendly, PDF & Email

tariq-javed-mashhadiجولائی2016 دو قبریں دے کررخصت ہوگیا۔12 جولائی 2016 کورابعہ ،میری بیگم اس دنیا سے چلی گئی۔ 21 جولائی 2016 کو ابّا جی نے آنکھیں بند کر لیں ۔دو برس قبل اپریل میں امّی جان رخصت ہو گئی تھیں ۔ رابعہ میرے ساتھ عید الفطر کی مکمل تیاری کے ساتھ لعل پیر سے ملتان ہنسی خوشی گئی،عید والے دن بخار کا حملہ ہوا ، ڈاکٹرز نہیں تھے ۔عید کے تیسرے دن ہسپتال داخل ہوئی،محض چار دن بعد وہ دنیا سے چلی گئی۔
رابعہ کے ساتھ میری رفاقت سولہ برس تین ماہ رہی۔ 2000 ؁ میں ہماری شادی ہوئی تو وہ 21 سال اور میں 30 سال کا تھا ۔ہماری شادی ارینجڈ میرج تھی ۔دونوں خاندان اس سے پہلے ایک دوسرے کو نہیں جانتے تھے ،شادی کے بعد وقت نے دونوں خاندانوں کو یوں اکٹھا کیا کہ آج دونوں خاندانوں کو ملانے والی دنیا میں نہیں مگر دونوں ہی ایک دوسرے کے ساتھ جڑے ہوئے ہیں ۔ہم دونوں کی طبعیتوں میں بڑا فرق تھا ۔میرے اوپر خاموشی اور سنجیدگی کی چادر بڑی گہری تھی اور رابعہ شوخ اور چنچل۔ مَیں نے قہقہہ تو کیا لگانا تھا ،مسکراتا بھی کئی دنوں بعد تھا جب کہ وہ ہر دم مسکراتی، قہقہے لگاتی رہتی۔اپنے گھر میں تو وہ سب کی پسندیدہ تھی ہی ،ہمارے گھر میں بھی میرے سمیت اس نے سب کو اپنا بنا لیا ۔اور پھر مرتے دم تک اپنا بنائے رکھا ۔ اس کی موت پر اس کے اپنے تو دھاڑیں مار مار کر روئے ،وہ آنکھیں بھی اشکبار ہوئیں جو اسے صرف ایک بار ملے تھے ۔وہ اپنے چار بہن بھائیوں میں بڑی تھی اور میں چار بھائیوں میں سب سے چھوٹا ، وہ اپنے ماں باپ کی لاڈلی تھی اور میں اپنے ماں باپ کا انوکھا لاڈلا ۔ ۔ اور ہم دونوں ایک دوسرے کے لاڈلا اور لاڈلی تھے۔ سولہ برسوں کی رفاقت میں شروع کا وقت جس میں ہم ایک دوسرے کو سمجھے،جو بہت ہی مختصر تھا ،نکال کر اس کی زندگی کے آخری لمحوں تک ہم نے ایک دوسرے کو لاڈوں میں ہی رکھا ۔
ہمارے بچے نہیں تھے مگر یہ کمی ہمارے رشتے میں کبھی مسئلہ نہیں بنی۔ ہم دونوں کا رشتہ میا ں بیوی کے ساتھ ساتھ دوستی کا بھی تھا اور ہم ایک دوسرے کے لیے بچے بھی تھے۔ہرعورت کی طرح بچے اس کی زندگی کی شدید خواہش بھی تھے مگر اللہ کے فیصلوں کے سامنے انسان بڑا بے بس ہے۔ 37 برس کی عمر تک جہاں اس نے بچوں سے محرومی کے مسئلے کو روگ نہیں بنایا،اپنی بیماری کا ہنستے مسکراتے مقابلہ کیا ۔بیماری کے با وجود اس نے بہت اچھّا وقت بھی گزارا۔ لوگوں میں محبتیں بانٹیں اور سمیٹیں بھی ۔ہمارے گھر سے اسے بے حد پیار ملا ۔2011 میں اللہ تعالیٰ نے حج کی سعادت بخشی ۔رہنے کو اللہ تعالیٰ نے بہت اچھّا گھر دیا ۔مالی آسودگی بھی دی ۔وسعتِ قلبی مثالی تھی۔ ہر ضرورت مند کی ضرورت پوری کرنااس کے لئے عبادت کا درجہ تھا ۔ہمارے گھر میں کام کرنے والی ماسی حمیدہ ہمارے گھر کا تیسرا فرد تھی۔یہی وجہ ہے کہ وہ آج بھی اُس کو یاد کرتے ہوئے منہ چھپائے آنسو بہاتی رہتی ہے۔اَسی سالہ ماسی کرم جو اکثر اس کے پاس آتی تھی،جنازے والے دن جنازہ گاہ میں 70 کلو میٹر کا سفر کر کے محض اس کا آخری دیداد کرنے کے لئے انتظار میں تھی۔اس کے جنازے میں شامل لوگوں کی کثیر تعداد اُس کے اچھے اخلاق کا منہ بولتا ثبوت تھا۔
لعل پیر پاور پلانٹ ،جہاں میری جاب ہے ،میرے ساتھ کام کرنے والے تمام لوگ ،کالونی کی خواتین اس کے اخلاق کو آج بھی یاد کرتے ہیں ۔ کوئی پانچ برس قبل اس نے گھر کے باہر ٹھنڈے پانی کا کولر رکھوانا شروع کیا ،کبھی کبھی وہ کولر شربت سے بھی بھروا دیتی۔ سردیوں میں کبھی کبھی وہی کولر چائے سے بھروا کر رکھتی۔ماسی سے کہا ہوا تھا کہ مالی یا دوسرے کام کرنے والے لوگ جب کبھی چائے مانگیں ،بنا دو،میری اجازت کی ضرورت نہیں ۔
یہ اس کی زندگی کا ایک پہلو تھا ۔
دوسرا پہلو 2004 میں شروع ہوا جو اس کی موت پر ختم ہوا ۔جولائی 2004 میں ہمارا پہلا اور آخری بیٹا پیدائش سے قبل وفات پا گیا تو اس کی صحت کے مسائل شروع ہو گئے ۔میرے اصرار کے با وجود ملتان کے مشہور گائنی کے ڈاکٹر نے کیس پر توجہ نہ دی ۔بیٹے کی وفات پر بڑی ڈھٹائی سے اُنہوں نے اپنا قصور مان لیا ۔رابعہ در اصل Liver Cirrhosis کی مریضہ تھی جس کا علم ڈاکٹر کو تھا ،مجھے نہیں تھا ۔حالت بگڑنے پر ڈاکٹرز کے مشورے پر مَیں اسے آغا خان ہسپتال کراچی لے گیا۔ جہاں گیارہ دنوں کے صبر آزما علاج کے بعد ڈاکٹر ز کے جواب دینے پر واپس ملتان لے آیا ۔ مجھے یاد ہے ہم دونوں اور رابعہ کے امّی ابو جب ملتان ائر پورٹ پر اترے تو سب رشتہ دار غم زدہ تھے ۔رابعہ اس وقت 24 گھنٹوں کی مصنوعی آکسیجن پر تھی جس کا انتظام گھر پر کر دیا گیا تھا ۔اللہ نے پھر ہومیو ڈاکٹر اسد وصی کی صورت میں ایک فرشتہ ہمیں دیا جن کے علاج سے رابعہ زندگی کی طرف لوٹ آئی۔مایوسیوں کے اندھیرے ختم ہو گئے۔2010 میں ڈاکٹر اَسد وصی کی اچانک وفات سے اس کا وہ علاج رک گیا ۔انگریزی ادویات کا سلسلہ ڈاکٹر نذیر ملک کے ساتھ چلتا رہا ۔بد قسمتی سے جگر کے جس مرض میں وہ مبتلا تھی اس کا واحد حل ٹرانسپلانٹ تھا ۔ پاکستان میں اس کا علاج اِسلام آباد میں شفاء انٹر نیشنل میں ہے مگر بہت قابل اعتماد نہیں ۔ ڈاکٹر نذیر صاحب کے مشورے پر 2015 میں جگر ٹرانسپلانٹ کے لئے انڈیا جانے کی تمام تیاریاں مکمل تھیں تو ملتان کے ایک اور ڈاکٹر اکرم ملک نے نہ جانے کا مشورہ دے دیا ۔ جولائی2016 میں اَب تیاری مکمل تھی ۔رمضان المبارک کے بعد ہنسی خوشی عید کی تیاری کر کے ملتان گئے،عید کے دن بخار ہوا ،عید کی وجہ سے ڈاکٹر ز نہیں تھے۔ عید کے تیسرے دن ڈاکٹر اکرم صاحب ملے ،جن کے مشورے سے ملتان کے ایک پرائیویٹ ہسپتال میں داخل کروایا۔نمونیہ کا شدید حملہ تھا ،جو جان لیوا ثابت ہوا ۔صرف چار دن بعد ڈاکٹروں کی اندھا دھند دوائیوں کے سامنے جگر نے بالکل کام چھوڑ دیا ۔ہنستی مسکراتی ،زندگی سے کبھی مایوس نہ ہونے والی رابعہ کبھی واپس نہ آنے کے لئے دنیا سے چلی گئی۔گزرے سولہ سالوں میں دو بار شفاء انٹر نیشنل اسلام آباد ،ڈاکٹرز ہسپتال لاہور ،آغا خان کراچی اور ملتان کے ڈاکٹرز کے بے شمار چکر اس کی زندگی نہ بچا سکے۔ پاکستان کی بد قسمتی ہے کہ اِبھی تک کوئی اچھّا سرکاری ہسپتال نہیں بن سکا جہاں جگر کے مریضوں کا علاج ہو سکے۔
کاش کوئی دھرنا اس کے لئے بھی دے ۔
رابعہ میری زندگی کا بہترین ساتھی تھی۔میری زندگی میں رنگ بھرنے والی رابعہ قبر میں جا سوئی ہے۔ اس کی قبر پر پھول رکھتا ہوں تو آنسو ضرور نکلتے ہیں ۔ صبح دفتر جاتا ہوں تو اس کا مسکراتا چہرہ نہ پا کر اُداس ہوتا ہوں ۔ آفس میں اس کا فون نہیں آتا تو بے سود انتظار ضرور کرتا ہوں ۔ہر جگہ وہ میرے ساتھ ہے بھی اور نہیں بھی ۔ کہاں کہاں میں اسے یاد نہیں کرتا ۔میری بیوی نہیں بچھڑی،میرا یار مجھ سے ہمیشہ کے لئے دور ہو گیا ۔اپنے ہاتھوں سے اپنے یار کی کھلی آنکھیں بند کر کے،جنازے کو کندھا دے کر قبر میں سُلا آیا۔ اس نے کبھی واپس نہیں آنا مگر دِل ہے کہ مانتا نہیں۔ ملتان جاتا ہوں تو رابعہ کے امّی ، ابو ، بھائی بہن مجھے اکیلا پا کر اپنے آنسو چھپاتے ہیں۔اس کی تین سالہ بھتیجی معظمہ تو اپنی توتلی زبان میں یہ کہہ کر سب کو رلاتی ہے کہ’’ طارق انکل رابعہ خالہ کیوں نہیں آتی‘‘ ؟۔
رابعہ نے اپنے مشکل وقت میں بھی امید کا دامن تھامے رکھا۔وہ میرے مشکل وقت کی بھی بے مثال ساتھی تھی ۔میری پیشہ ورانہ زندگی میں بھی اس کے مشورے بہت کام آئے۔منفی سوچ رفتہ رفتہ اس کی زندگی سے بالکل ختم ہو گئی تھی۔اپنی بیماری میں بھی وہ دوسرے بیمار لوگوں کو ہمت اور حوصلے سے جینے کے راستے بتاتی۔بہت سارے معاملات میں اس کارویہ عام لوگوں سے بالکل مختلف ہوتا ۔صلح جوئی اس کی شخصیت کا خاص جز و تھا اسی لئے وہ بچوں ،بڑوں،اور ہم عمروں میںیکساں ہر دلعزیز تھی۔اپنے گھر میں بڑی ہونے کے ناتے بڑے فیصلوں میں بھی شامل ہوتی۔ اس کے علاج کے لئے جو بہترین کوششیں کی جا سکتی تھیں وہ کی گئیں سوائے جگر ٹرانسپلاٹ کے جس کے لئے اب تیاری تھی مگر اللہ کے فیصلوں کے سامنے انسان بے بس ہے۔انسان اللہ کے فیصلوں کو ماننے کے تابع ہے ان پر انگلی اٹھانا اس کے اختیار میں نہیں۔اگر اس کے اختیار میں ہو تو وہ کبھی اپنے پیاروں کو قبرستانوں کی تنہائی میں چھوڑنے نہ جائے۔میاں بیوی کا رشتہ بہت خوب صورت ہے۔ جن کے پاس یہ رشتہ باقی ہے ،اس کی قدر کریں ۔ گلے ، شکوے،نفرتیں ختم کر کے ایک دوسرے کے ساتھ جینا سیکھیں اور اَپنی زندگی جنت بنا لیں ۔ یہ زندگی دوبارہ ملے گی نہ یہ رشتے۔جب یہ رشتے نہیں رہتے تو ان کی اہمیت کا اندازہ ہوتا ہے۔پھر اداسیوں کے پہاڑ ہوتے ہیں اور غموں کے پتھر جنہیں کبھی دور نہیں کیا جا سکتا۔اللہ سے دعا ہے کہ اللہ پاک رابعہ کو کروٹ کروٹ جنت نصیب کرے۔

Views All Time
Views All Time
418
Views Today
Views Today
1
یہ بھی پڑھئے:   آؤ قید ہو جاؤ
Previous
Next

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

%d bloggers like this: