عزت مآب وزیرآبادی استرے سے لے کر میرے ”سوشلسٹ“ مرشد تک سبھی فرما رہے ہیں کہ ”مدعی لاکھ برا چاہے کیا ہوتا ہے“۔ پیٹ بھروں کی مستیاں ہیں‘ غربت کے Continue Reading »