رذان النجر کا نہیں یہ امت کا جنازہ ہے؟

Print Friendly, PDF & Email

یہ کیسا بے شرمی کا اندھا گڑھا ہے کہ بھر کر ہی نہیں دے رہا ۔ شام ، کشمیر اور فلسطین مسلمانوں کی مقتل گاہیں بنی ہوئی ہیں لیکن امت کی غیرت سماجی میڈیا سے باہر ہی نہیں نکل رہی ۔ یہ پیغام آگے بڑھا دو اس پر پسند کا بٹن دبا دو اور اسے آگے بڑھا دو پھر منہ تک چادر تان کر سو جاؤ، آج لوگ اس طرح سے اپنی ملی ذمہ داری نباہنے کی کوششوں میں مصروف ہیں یا پھر ہم جیسے لکھنے والے نوحے لکھے جا رہے ہیں لیکن امت کواکھٹا کرنے اور جگانے کے لئے کچھ بھی نہیں کر پا رہے ۔ آخر ایسا کر بھی کیسے سکتے ہیں یہاں تو سب ہی اپنے اپنے محلوں میں بیٹھے اپنی بادشاہت کو دوام دینے کے لئے کی جانے والی سازشوں میں مصروف ہیں۔ یہ لوگ تو صرف اور صرف ان لوگوں کو خوش کرنا پسند کرتے ہیں جو انہیں دنیاوی حفاظت کا یقین دلاتے ہیں اور دوست کے روپ میں خطرناک دشمن بن کرانجام کی طرف گھسیٹے جا رہے ہیں یعنی آستینوں میں سانپ ہیں۔ کہیں داخلی مسائل  میں الجھے ہوئے ہیں، ہمیں اقتدار کی حوس کسی اور جانب دیکھنے نہیں دیتی۔

اب یہ باتیں ڈھکی چھپی نہیں ہیں کہ اسرائیل کی ہٹ دھرمی بھی بھارتی ہٹ دھرمی سے قطی مختلف نہیں ہے یا دونوں ایک دوسرے سے بازی لے جانے کی تگ و دو میں مشغول ہیں، کیا ایسا نہیں ہے کہ یہ دونوں ہی امریکہ کی ایماء پر فلسطین اور کشمیر میں ریاستی دہشت گردی کے مثالیں قائم کر رہے ہیں۔ دنیا کو حق کے لئے آواز اٹھانے کا کبھی کوئی فائدہ نہیں ہوا ، جس کی تازہ ترین مثال گزشتہ ہفتے بیشتر ممالک نے اسرائیلی جارحیت کے خلاف ایک مذمتی قرارداد اقوام متحدہ میں پیش کی جسے امریکہ نے ویٹو پاور استعمال کرتے ہوئے اسے رد کردیا، معلوم نہیں کیوں پھر بھی کسی کو کچھ سمجھ نہیں آیا۔

یہ بھی پڑھئے:   مسلمانوں کو شیعہ مخالف جبر کو ایک سنگین مسئلہ تسلیم کرنے کی ضرورت ہے - مستجاب حیدر

رذان النجر ایک انسانیت کی خدمت پر معمور۲۱ سالہ فلسطینی لڑکی کا نام ہے (یقیناًیہ نام آج شہرت کی بلندیوں کو چھو رہا ہوگا )،جو کہ ایک غیر سرکاری تنظیم میں بطور پیرا میڈیکل اسٹاف اپنی ذمہ داریاں نبہا رہی تھی۔ یہ لڑکی یقیناً اپنے معمول کے فرض کی ادائیگی میں مصروف تھی جس کا کام زخمیوں کو ابتدائی طبی امداد فراہم کرنا تھااور وہ پیشہ ور طبی خدمات فراہم کرنے والوں کی نشاندہی کرنے والا سفید کوٹ بھی پہنے ہوئے تھی ، یہاں یہ بات واضح کرتے چلیں کہ جنیوا کنویشن کے مطابق طبی سہولیات فراہم کرنے والوں پر حملہ جنگی جرائم کی مد میں آتا ہے، اپنے فرائض کے دوران ایک گولی اس کے سینے میں لگی اور وہ نازک اندام اپنے خالق حقیقی سے جا ملی اور شہادت کے اعلی مرتبے پر فائز ہوگئی۔ رذان کسی گمنام گولی کا نشانہ نہیں بنی اسے اس کے فرائض کی ادائیگی کی سزا کے طور پر ایک اسرائیلی نشانہ باز نے گولی مار کر شھید کے رتبے پر فائز کیا۔ اس نڈر اور بہادر لڑکی نے اپنے سینے پر گولی کھائی اور دشمن کے دل میں اپنا اور اپنی قوم کی ہر بیٹی کی بہادری کا خوف واضح کر دیا۔

کشمیر اور فلسطین کی سڑکوں پر نوجوان لڑکوں کے لاشے کاندھوں پر اٹھائے لوگ نکلا کرتے تھے مگر اکیسویں صدی چل رہی ہے عورت نے مرد کی برابری کا علم اٹھایا ہوا ہے اور اس برابری کا علم خواتین کے ہاتھوں میں تھمانے والے دراصل عورت کی عصمت کے سوداگر ہیں، لیکن ذرا غور کریں اور دھیان دیں کہ دخترِ کشمیر و فلسطین اپنی نسوانیت اپنی خوب صورتی اپنے وطن کی آزادی کی خاطر کس طرح سے خاک میں ملانے گھر سے نکلی ہیں جو اپنے جسموں کو گولیوں سے چھلنی کروالیتی ہیں جو خود کش بن کر دشمن کو دھلا دیتی ہیں لیکن اپنی عزتوں پر آنچ نہیں آنے دیتیں۔ وہ مائیں تو عظیم ہیں کہ جن کے لخت جگر مادر وطن کی خاطر جانوں نظرانہ بیدریغ دئیے جا رہے ہیں لیکن ان ماؤں کے عزم اور حوصلے کو نام دینے کیلئے لفظ نہیں ہیں جو اپنی بیٹیوں کو بھی راہ حق کے شہیدوں کی صف میں کھڑا کرنے سے گریز نہیں کررہی ہیں۔ کیا خوب عورت اور مرد کی برابری کی مثال رذان اور اس کی جیسی لڑکیاں قائم کر چکی ہیں۔

یہ بھی پڑھئے:   بادشاہ ، جرنیل اور منتخب آمر کبھی غلط نہیں سوچتے | حیدر جاوید سید

رذان ایک عام لڑکی نہیں تھی اورکوئی بھی کشمیری اور فلسطینی لڑکی عام نہیں ہے، دراصل یہ امت کی وہ صدائیں ہیں جو دنیا میں گونج رہی ہیں اور کسی محمد بن قاسم نامی شخص کی سماعتوں سے ٹکرانا چاہتی ہیں جوکہ ان کی مدد کے لئے کھڑا ہو اور انہیں دشمن کے چنگل سے آزاد کروائے بلکہ انہیں ان کی سرزمین بھی دلوائے، لیکن افسوس کہ ہم تمام کانوں میں آسائشوں کا مدھر رس گھولتا ساز انڈیلے ہوئے ہیں ہم سراپا مادہ پرست اور تعیش پرست ہوچکے ہیں ، ہم اس وقت تک مصیبت کو مصیبت نہیں کہتے جب تک وہ ہم پر پل پڑے۔
کشمیر ، شام اور فلسطین میں جو جنازے اٹھائے جا رہے ہیں انہیں من کی آنکھوں سے دیکھیں انہیں ایمان کی آنکھوں سے دیکھیں توکیا ہر جنازہ امت کا جناز نہیں لگتا، جسے پل بھر کیلئے غمزدہ آنکھوں سے دیکھتے ہیں اور آگے بڑھ جاتے ہیں۔ یہ کیسا بے شرمی کا اندھا گڑھا ہے کہ بھر کر ہی نہیں دے رہا ۔

Views All Time
Views All Time
167
Views Today
Views Today
1

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: