Skip to Content

Qalamkar | قلم کار

جہالت، ظلم اور ناانصافی کے خلاف برسرپیکار

رسولاں‌بی بی

رسولاں‌بی بی
Print Friendly, PDF & Email

waqar hashmiآج میری ملاقات ایک انتہائی دلچسپ خاتون سے ہوئی. ان کی عمر تقریباً 75 سال اورنام رسولاں بی بی، ہماری گفتگو تقریباً 4 گھنٹے پر محیط رہی.
مجھے گفتگو کے آغاز میں ہی اندازہ ہو گیا کہ ان خاتون کو اللہ نے کمال کی قصہ گوئی کی صلاحیت سے نوازا ہے. وہ انتہائی دلچسپ انداز میں مجھے حکایتیں، کہاوتیں، لوک کہانیاں، نظمیں، غزلیں، اشعار، اپنی زندگی کے تجربات کی روشنی میں حال اور ماضی کا تقابل، تقسیمِ ہندوستان سے پہلے اور بعد کے حالات، گویا کہ شیخ سعدی سے لیکر اشفاق احمد اور بچپن میں کسی گاؤں کے میلے پر سنا ہوا کسی قصہ گو سے قصہ ، بہادر شاہ ظفر ، مرزا غالب سے لیکر اسماعیل میرٹھی اور بسوں کے پیچھے لکھے مشہور اشعار ، تصوف، فلسفہ ، ظنزومزاح ،لطائف ، اور ان سب کو اس حسین انداز اور ترتیب سے سنایا گیا کہ میرے ذہن پر ذرا بھی گراں نہیں گزری نہ تھکاوٹ یا اکتاہٹ کا احساس ہوا.
لیکن یہ بات سن کر میں ورطہ حیرت میں غرق ہو گیا کہ یہ خاتون صرف دو جماعتیں پڑھ سکی تھیں ،اس لئے لکھنا پڑھنا نہیں جانتیں،لیکن ان کو پہلی جماعت سے لیکر بارہویں جماعت تک کی اردو کی ٹیکسٹ کتابیں ازبر تھیں۔مجھے اشتیاق ہوا کہ جانوں کہ کیا وجہ ہے کہ وہ پڑھ نہیں سکیں ،تو انہوں نے بتایا کہ گاؤں والوں نے صرف اس بات پر گاؤں کی تمام لڑکیوں کو سکول جانے سے منع کر دیا کیوں کہ سکول میں آنے والی ایک نئی استانی ایک کی بجائے دو چٹیا کرتی تھی، تو گاؤں والوں کو اس کا یہ چال چلن پسند نہیں آیا اور انہوں نے اپنی بچیوں کو خراب ہونے سے بچانے کی خاطر ان کا سکول جانا بند کر دیا۔
سکول چھوٹ جانے کے بعد وہ صرف گھر کا کام کاج کرتیں ، اور جب ان کے بھائی پڑھا کرتے تو یہ ان کو غور سے سنا کرتیں، بھائیوں کو پڑھتا سنتے جوان ہویئں ، شادی کے بعد بچوں کو پڑھتا سنتے جوانی گزری اور اب بڑھاپا پوتوں کو پڑھتا سنتے گزر رہا ہے، ریڈیو یا ٹی وی،گھر ہو یا گلی ،بازار یا بس میں دورانِ سفر کوئی کسی موضوع پر گفتگو کرتا ہو، سب سنتیں،کسی کو اخبار پڑھتا سنتی ،بچوں کو فرمائش کر کے ان کا سکول کا سبق سنتی اور ان کو سب ازبر رہتا، باتیں اور واقعاتِ زندگی تاریخوں کے ساتھ یاد ہیں۔
ان سے ملاقات کے بعد میں خوشی اور حیرت کے ملے جلے احساس لےکر گھر کی طرف رواں تھا اور سوچ رہا تھا کہ پاکستان میں اس رسولاں بی بی جیسی کتنی ہی رسولاں ہیں جن کو اللہ نے ایسی بہت سی صلاحیتوں سے نوازا ہوگا ، لیکن تعلیم نہ ہونے کی وجہ سے وہ اپنی ان صلاحیتوں سے ملک و قوم ،اپنے بچوں اور غرضیکہ خود کو بھی کوئی فائدہ نہ دے سکیں ۔
گھر پہنچ کر انٹر نیٹ پر تحقیق کی تو پتہ چلا کہ آزاد انٹرنیشنل ذرائع کے مطابق صرف 40 فیصد پاکستانی خواتین خواندہ ہیں، جن میں وہ خواتیں بھی شامل ہیں جو صرف اپنا نام لکھ سکتی ہیں، یعنی پاکستان کی 60 فیصد خواتین یعنی کہ "مائیں” ان پڑھ ہیں. ڈان نیوز کی رپورٹ کے مطابق پاکستان شرح خواندگی کے حساب سے سروے کیے جانے والے 120 ممالک میں سے 113 ویں نمبر پر تھا- پاکستان میں مرد و زن کی شرحِ خواندگی صرف 56 فیصد ھے.اور پاکستان کے صرف 9.6 فیصد لوگ ہی یونیورسٹی سے گریجویٹ ہو پاتے ہیں۔” پاکستان کا مطلب کیا ۔۔۔ لا اللہ الا اللہ ، نظامِ مصطفیٰ (ص) ، شریعت کا نفاذ، اسلامی مملکت، اسلام کے نام پر آذاد ہونے والا ملک ”
پچھلے 69 سال سے ان سارے نعروں سے گونجنے والا ملک پاکستان رسول اللہ (ص) کی علم کی اہمیت کے متعلق حدیثیں کیسے بھول گیا ؟؟؟

Views All Time
Views All Time
836
Views Today
Views Today
2
یہ بھی پڑھئے:   محسن نقوی کا نوحہ - اختر عباس
Previous
Next

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

%d bloggers like this: