Oops! It appears that you have disabled your Javascript. In order for you to see this page as it is meant to appear, we ask that you please re-enable your Javascript!

اپوزیشن اپوزیشن کاکھیل

Print Friendly, PDF & Email

wisal khanوطن عزیزمیں پانامہ لیکس کے معاملے پرتاحال گرماگرم بحث جاری ہے یہ معاملہ شائد اتنی طوالت اختیارنہ کرتااگراس میں وزیراعظم کے بچوں کے نام نہ آتے کیونکہ ہم ایسے کئی معاملات سے گزرے ہیں جب ایک معاملہ پوری قوم کیلئے انتہائی اہمیت اختیارکرلیتاہے اوراسکی اہمیت کے پیشِ نظر لگتاہے کہ یہ معاملہ اپنے انجام کوضرورپہنچے گامگرچنددن گزرنے کے بعدآہستہ آہستہ قوم کے ساتھ ساتھ حکمران اورمیڈیابھی یہ معاملہ بھول بھال جاتاہے اور تمام لوگ اپنے اپنے امورکی انجام دہی میں جت جاتے ہیں پانامہ لیکس کے معاملے میں بھی اگراہم شخصیات کے نام نہ آتے تو یہ معاملہ بھی کب کا مرکھپ چکاہوتامگر ملکی اپوزیشن کوبھی چونکہ خود کومیڈیااورعوام کی نظروں میں اِن رکھنے کاایک موقع ہاتھ آیاہے لہٰذا تقریباًڈیڑھ ماہ گزرجانے کے باوجودپانامہ لیکس کامعاملہ ناصرف زندہ وتابندہ ہے بلکہ اس میں آئے روزنت نئے انکشافات سامنے آنے کا بھی سلسلہ اپنی پوری آب وتاب کے ساتھ جاری وساری ہے اب تک متعددپردہ نشین بے نقاب ہوچکے ہیں اور جو ’’ماہتاب ‘‘چہرے ابھی نقابوں میں چھپے ہوئے ہیں ان سے بھی نقاب ہٹ رہے ہیں اپوزیشن نے پانامہ لیکس کے معاملے پر وزیراعظم کوآڑے ہاتھوں لیااورانکے سامنے سات سوال رکھ کراسمبلی میں انکے جوابات کامطالبہ کردیاگیا(یادرہے سوالات میڈیامیں کئے گئے جبکہ جوابات اسمبلی میں مانگے گئے)تقریباًدوہفتوں کی تگ ودودکے بعداپوزیشن وزیراعظم کوقومی اسمبلی لانے میں کامیاب ہوگئی سپیکرنے اعلان کیاکہ وزیراعظم کے خطاب کے بعد قائدحزب اختلاف خورشیدشاہ اورانکے بعدعمران خان خطاب فرمائیں گے وزیراعظم نے اپنے خطاب میں حسب معمول اپنی ٹیکس ادائیگی اوردبئی سمیت سعودی عرب میں اپنی فیکٹریوں کاتفصیلی ذکرکیاجواب موجودنہیں وزیراعظم کاکہناتھاکہ ان فیکٹریوں کی فروخت سے لندن کے فلیٹس خریدے گئے انہوں نے ان دونوں فیکٹریوں کی مالیت بھی بتادی انکے خطاب کے بعدگرماگرم تقریروں کی توقع کی جارہی تھی مگراپوزیشن لیڈرخورشیدشاہ نے کہاکہ چونکہ وزیراعظم نے ہمارے سات سوالوں کے جواب نہیں دیے لہٰذا ہم اجلاس سے واک آؤٹ کرتے ہیں اوراسکے ساتھ ہی پوری اپوزیشن ایوان سے واک آؤٹ کرگئی اپوزیشن کی واک آؤٹ پہ ملک کے سنجیدہ حلقے حیران رہ گئے اپوزیشن کی وزیراعظم کواسمبلی بلاکر خود باہرچلے جانے کی منطق کسی کی سمجھ میں نہیں آئی بعدمیں خورشیدشاہ نے بتایاکہ چونکہ وزیراعظم نے ہمارے سات سوالوں کے جواب نہیں دیے لہٰذا ہمارے پاس واک آؤٹ کے سواکوئی چارہ نہیں تھا انہوں نے اسمبلی فلورپہ اپنے مختصرخطاب میں کہاکہ وزیراعظم نے ہمارے سات سوالوں کے جواب نہ دےکریہ سوال سترتک بڑھادیے بعدازاں اپوزیشن کی جانب سے ستر سوالوں کاذکرباربارکیاگیاجس کامطلب یہی لیاجاسکتاہے کہ اپوزیشن پہلے سے طے کئے بیٹھی تھی کہ واک آؤٹ کرناہی ہے اور جن سترسوالوں کی بازگشت بعدمیں سنائی گئی یہ سوالات پہلے سے تیارکئے گئے تھے ورنہ جہاں تک اپوزیشن کے سات سوالوں کے جوابات کاتعلق ہے یہ وزیراعظم کی جانب سے اسمبلی خطاب میں دیے گئے اب اسے درست یاغلط سمجھنااپوزیشن کاکام ہے مگرسوالات کے جوابات نہ دینے کاشکوہ بالکل ہی لغو اورفضول تھااپوزیشن نہ جانے کس کے ہاتھوں میں کھیل رہی ہے اورکیاکھیل رہی ہے؟ جو وزیراعظم کی ایوان میں موجودگی کافائدہ نہ اٹھا سکی اوربلاوجہ واک آؤٹ کرگئی جب اسے اپنی غلطی کااحساس ہواتو تیسرے روزوہی خورشیدشاہ اور وہی عمران خان ایوان میں دوبارہ تشریف لائے اور انکی جانب سے جوش خطابت کاجادوجگایاگیا یہی جادو اگر وزیراعظم کی موجودگی میں جگایاجاتاتواس کے وزن میں اضافہ یقینی تھا تیسرے دن عمران خان نے ایوان میں اپنے اوپر شوکت خانم کینسرہسپتال کے حوالے سے لگائے گئے الزامات کادفاع توکیامگران کے بعدوزیردفاع نے ان پرمزیدالزامات لگائے جنہیں سننے کیلئے خان صاحب ایوان میں موجودنہیں تھے خان صاحب نے اپنی تقریرمیں یہ بات کرکے ہمارے ناقص علم میں بیش بہااضافہ کیاکہ اس اسمبلی کے ایک منٹ پرقوم کے سات لاکھ روپے خرچ ہوتے ہیں یہ قوم پہلے ہی مہنگائی کی چکی میں پس رہی ہے اوپرسے اس کے ایوان بھی اسے بیحدمہنگے پڑرہے ہیں خان صاحب کو ایوان کی قدروقیمت کااحساس ہے تووہ ایوان کووقت کیوں نہیں دے رہے؟اسی مہنگے ایوان سے خان صاحب اپنے تیس ساتھیوں سمیت کئی مہینے تک غیرحاضر رہے جبکہ انہوں نے اس غیرحاضری کے باوجود بھی مراعات اورمعاوضہ وصول کیا اس بربادقوم کاپیسہ لوٹنے اورضائع کرنے میں کسی نے بھی بخل سے کام نہیں لیااب بھی اگر خان صاحب وزیراعظم کے بعدخطاب فرماتے تواگلے دن اجلاس کی ضرورت ہی نہ رہتی یاپھراگلے دن اجلاس میں سیاسی رہنماؤں کی جلسوں سے مشابہ تقاریرکے علاوہ ملک وقوم کی بھلائی کے امورانجام دیے جاتے بہرحال پانامہ لیکس کااونٹ ڈیڑھ مہینے بعد بھی کسی کروٹ بیٹھتانظرنہیں آرہااسکی دوسری قسط اورعمران خان کی جانب سے آف شورکمپنی کے اعتراف کے بعدحالات گنجلک صورت اختیارکرگئے ہیں اوریہ اب ایسی الجھی ہوئی ڈور بن چکی ہے جس کاکوئی سراکسی کے ہاتھ نہیں آرہاعمران خان وزیراعظم کوطعن وتشنیع کانشانہ بناتے ہیں پیپلزپارٹی والے بھی وزیراعظم کے خلاف الزامات کی اڑتی دھول میں اپناچہرہ چھپانے کی کوشش کررہے ہیں جبکہ حکومتی وزراء اورمولانا فضل الرحمان ان دونوں کے لتے لینے میں لگے ہوئے ہیں کبھی سات سوالات کی بازگشت سنائی دیتی ہے تو کبھی سترکی ،یہ تعدادشائد آہستہ آہستہ بڑھ کرسات سوتک پہنچ جائے. رہ گئی قوم تو وہ ہکابکاہوکراس تمام صورتحال کاتماشادیکھ رہی ہے اب وزیراعظم کی تجویزکے مطابق پارلیمانی کمیٹی تک بات گئی ہے کچھ عرصہ کمیٹی کمیٹی کھیلنے میں صرف ہوجائے گااسی طرح رمضان کابابرکت مہینہ بھی شروع ہونے کوہے اس کے بعدلوگ عیدوغیرہ میں مصروف ہوجائیں گے اورپانامہ لیکس کی وجہ سے احتساب کی جوامیدپیداہوئی تھی وہ وقت کی گرد میں دب جائےگی حقیقی احتساب اس ملک میں نہ تواپوزیشن چاہتی ہے اورنہ ہی یہ حکومت کامطمع نظرہے موجودہ اپوزیشن پاکستانی تاریخ کی عجیب اپوزیشن ہے جسے عوامی مسائل ،امن وامان کی صورتحال ،ٹارگٹ کلنگ ،اغوابرائے تاوان ،بجلی اورگیس کی لوڈشیڈنگ ،دوائیوں اوراشیائے خوردنی کی بڑھتی ہوئی قیمتوں اوردہشت گردی سے کوئی سروکارنہیں بس اپنی پوائینٹ سکورنگ اور انا عزیزہے حکومت کی اصلاح ،سنجیدہ طرزِ فکر اورمثبت تنقیدکی بجائے اسکی دلچسپیوں کا مرکزومحور’’ اپوزیشن اپوزیشن کاکھیل‘‘ ہے۔

Views All Time
Views All Time
341
Views Today
Views Today
2
یہ بھی پڑھئے:   رابن ہڈ اور جگا جٹ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: