Skip to Content

Qalamkar | قلم کار

جہالت، ظلم اور ناانصافی کے خلاف برسرپیکار

اگلے جنم موہے بٹیا نہ کیجو

by جون 11, 2016 بلاگ
اگلے جنم موہے بٹیا نہ کیجو
Print Friendly, PDF & Email

mahjabeen asifساری دنیا کے غم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یا ۔۔ اک ترا غم ۔۔۔۔۔۔اک عالمگیر مسئلہ جس کا آج کل چرچا ہے اک ہی مسئلہ ہے ۔۔مدعا ہے جو غور طلب ہے ۔۔یہی مسئلہ ہے جو مسلمین کو اتحاد بین المسلمین کی طرف راغب کرتا ہے ہم نہ ہوں تو زمانے کی سانس رک جائے ۔۔۔۔۔۔ قتیل وقت کے سینے میں ہم دھڑکتے ہیں ۔۔ ۔۔۔ یعنی ترے نام سے شروع ۔۔ ترے نام پہ ختم ۔۔۔۔۔مطلب ۔۔۔۔۔وجہ تنازعہ "عورت” اس وجود زن کو کیسے تہہ تیغ کیا جائے ۔۔۔کس طرح اس عورت نامی مخلوق کے طوق سے اپنے حلقوم کو آزاد کرالیا جائے ۔۔۔۔کن بنیادوں پر ایسے منشور بنائے جائیں ۔۔ایسی تحاریک چلائی جائیں ۔مزاکرے ۔۔سیمینارز، ورنہ فتاوی تو کہیں نہیں گئے ۔۔جلا کے دیکھ لیا ۔۔۔۔مار کے دیکھ لیا ۔۔زندہ درگور بھی کردیا ۔ تیزاب گردی کے زریعے بھی آبلہ روئی کردی ۔۔ ۔جلا کے بسوں میں چھوڑ دیا ۔۔کچھ کلو گندم کے عوض جنس کم مایہ کو بیچ دیا ۔۔مقتدر ذھنوں نے سوچا ۔۔۔۔۔اب ایسا کرتے ہیں ۔۔۔۔قوانین کی بیڑیاں پہنا دیں ۔۔۔جکڑی جائے سلاسل کی آہنی بیڑیوں میں ۔۔۔۔۔کس طرح اور کن بنیادوں پر اس ڈائنا سور جیسی مخلوق سے چھٹکارا حاصل کیا جائے ۔۔۔۔اس کے تشخص کو ہی زیر خاک کردیا جائے ۔۔۔اس کی پہچان ۔۔وقار سب کچھ چھین کر بے نشانی ، بے امانی کے صحراؤں میں چھوڑ دیا جائے ۔۔۔۔۔۔۔۔اپنی تمام تر توانائیاں صرف کرکے عورت جیسے نازک وجود کو دریدہ کرنے میں پیش پیش رہا جائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کارل مارکس ۔۔۔نے کہا تھا ۔۔۔۔ ،،،کسی معاشرے کے مہذب ہونے کا اندازہ وہاں کی عورت کی سماجی حیثیت سے بآسانی لگایا جاسکتا ہے، کجا یہ کہ مسلم معاشرہ تو کیا ہم اب پھر دوبارہ معاشرتی ۔اخلاقی لحاظ سے اس "زیرو پوائنٹ” پر نہیں کھڑے ہیں ۔۔۔جہاں ننھی سی معصوم بیٹی کو باپ گڑھا کھود کر دفن کر رہا ہے اور وہ بابا کے چہرے سے پسینہ صاف کر رہی ہے ۔۔۔۔۔بعد از نبوت یہ واقعہ سن کر آپ ﷺ کی ریش مبارک آنسووں سے تر ہوگئی۔ آپ ضبط نہ فرماسکے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے لگتا ہے دنیا کے سارے غم ۔سب مسائل اب کہیں پس پردے میں چلے گئے ہیں ۔۔۔حل طلب امور ۔۔کہنہ مسائل چمکتی میزوں کے نیچے منجمد ہو گئے ہیں ۔ غربت، تعلیم، دہشت گردی، جہالت ۔۔فرقہ واریت۔۔بھوک ۔۔خوف سے نجات، عدم تحفظ ۔۔۔سیکیورٹی ۔ صحت معاشی صورتحال ،خارجہ امور کرپشن ،رشوت اس مملکت خداداد سے یہ سب عنقا ہو چکے ہیں ۔۔۔راوی اب چین ہی چین لکھتا ہے ۔ ۔ اب فوکسڈ ہے تو صرف عورت کی ذات. آخر عورت کے لیے جارحانہ اقدام کی نوعیت کتنے پرسنٹ ہونی چاہیے اس کی باقاعدہ قانونی حیثیت کس قدر ضروری ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔دنیا کا پہلا دستور مرتب کرنے والے نبی آخر الزماں ﷺ کی تقلید کسی حدیث سے یہ ثابت کرکے دکھادیں کہ آپ صل نے اپنی ازواج پر نعوذ باللہ کتنی مرتبہ ہاتھ اٹھایا ۔۔یا سر زنش کی ۔۔۔آپ ﷺ نے ہمیشہ عورت کو جنت کے پھول کی خوشبو سے لطیف استعارے سے تشبیہ دی ۔ ۔ ۔۔انہیں دل کی سکینت قرار دیا ۔۔۔زمین پہ اللہ کا تحفہ قرار دیا ۔ آہ ۔ ۔۔ ۔ہم شاید نوازے جانے کے قابل قوم ہی نہیں رہے ۔ ۔۔۔۔۔اب ہم جہالت کے اس زیرو پوائنٹ پر کھڑے ہیں۔ جہاں آنکھیں، دل، کان سب صمم بکمم ہوچکے۔جن لفظوں کو اقراء نے صیقل کیا تھا ۔۔۔جس لفظ کی برکات سے مسلمانوں نے ساری دنیا پہ راج کیا تھا ۔۔۔آج ہم انہی لفظوں میں تحریفات کرکے انکے معنوں سے صرف نظر کر رہے ہیں۔اب کوئی نبی، کوئی صحیفہ نہی اترنے والا ۔۔۔۔۔۔جو ان بند گلیوں کے رستے کھول دے ۔۔۔ جو آنکھوں پہ بندھی پٹیاں کھول دے ۔۔۔۔۔کاش تشدد کے ان قوانین کی جگہ ہم کبھی پیار کے قوانین بھی پاس کروا کے دیکھیں ۔۔دنیا جنت نظیر ہوجائے گی ۔۔۔محبت واقعی فاتح عالم ہے کبھی گرفتار ہوکے تو دیکھیں ۔۔۔۔۔۔۔ورنہ ہم خود یہ دعائے نیم شبی کر لیتے ہیں اس صناع کے حضور ۔۔۔۔۔کہ مولا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اگلے جنم موہے بٹیا نہ کیجیو ۔۔۔۔

Views All Time
Views All Time
1019
Views Today
Views Today
1
یہ بھی پڑھئے:   بچوں کا ہوجکن لمفوما (حصہ سوم)
Previous
Next

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

%d bloggers like this: