جون بن حویؑ، ایک منور و معطر شہیدِ کربلا | نور درویش

Print Friendly, PDF & Email

لاہور بی بی پاکدامن کے عقبی علاقے میں سید تجمل عباس صاحب کا گھر تھا جسے علیؑ مسکن کے نام سے بھی جانا جاتا تھا۔ ایک راستہ ریلوے ہیڈ کوارٹر کے اندر سے ایک تنگ سی گلی سے بھی یہاں نکلتا تھا۔ تجمل عباس صاحب سرگودھا کے کمشنر ہوا کرتے تھے اور پاکستان کے لاتعداد قابل لوگوں کی طرح وہ بھی شہید کردئے گئے۔
یہاں محرم کے عشرہ اولی میں شام کے وقت مرحوم پروفیسر سجاد رضوی مجلس پڑھا کرتے تھے۔ اس کے فورا بعد گلستان زہراؑ ایبٹ روڈ میں مجلس کا آغاز ہوتا تھا اور علی مسکن سے بہت سے لوگ گلستان زہراؑ چلے جایا کرتے تھے۔ پروفیسر صاحب ماہرِ تعلیم تھے، عربی و فارسی پر عبور حاصل تھا اور غالبا پنجاب ٹیکسٹ بک بورڈ کے چئیرمین بھی رہے تھے۔ اُن کی مجلس ایک لیکچر کی مانند ہوا کرتی تھی۔ بے انتہا دھیمے لہجے میں شستہ اُردو میں بات کیا کرتے تھے۔ میری عمر اتنی زیادہ نہ تھی کہ اُن کے دقیق نکات سمجھ پاتا، اس لئے اپنے دادا مرحوم یا والد صاحب کے ہمراہ بس اس لالچ میں علی مسکن جایا کرتا تھا کہ مجلس کے بعد وہاں بیکری کے بہت ہی لذیذ بسکٹ، کیک بمعہ سبز چائے بطور تبرک ملا کرتے تھے۔ مجلس کے بعد لوگ وہیں گھر کے لان مں بیٹھ کر چائے اور بسکٹ کھایا کرتے تھے۔
میری بدقسمتی کہ میں اتنا بڑا نہیں تھا کہ پروفیسر صاحب کی مجالس سے استفادہ کرسکتا البتہ تبرک کی لالچ میں اکثر وہاں ضرور جایا کرتا تھا۔ بس اسی لالچ کی وجہ سے پروفیسر صاحب کی پڑھی ہوئی ایک مجلس میرے شعور میں ہمیشہ کیلئے بیٹھ گئی۔ یہ مجلس کربلا کے منور و معطر شہید، جون بن حویؑ کے بارے میں تھی۔ میری بڑی بہن بھی اکثر علی مسکن جایا کرتی تھی اور اکثر میری والدہ کو بتایا کرتی تھی کہ پروفیسر سجاد رضوی مصائب بھی یوں بیان کرتے ہیں جیسے لیکچر دے رہے ہوں اور ایسے ہی اُنہیں سنتے ہوئے بے اختیار آنکھوں سے آنسو جاری ہوجاتے ہیں۔ جونؑ کی مجلس میں میں نے پہلی بار اپنے اطراف غور کیا تو واقعی سننے والوں کی آنکھوں سے اشک رواں تھے۔ جونؑ کے مصائب میں نے سب سے پہلے پروفیسر سجاد رضوی سے سنے۔ مجھے ٹھیک سے یاد تو نہیں کہ اُنہوں  نے کیا پڑھا تھا، لیکن مجھے یاد ہے کہ میں نے اُن کی مجلس پہلی بار اُسی دن غور سے سنی۔ آج جب جب جونؑ کے مصائب سنتا ہوں تو پروفیسر سجار رضوی ضرور یاد آتے ہیں۔

کورس کی کتابوں میں ہم نے ہجرتِ حبشہ کا تذکرہ پڑھ رکھا ہے، مکہ میں مسلمانوں پر بڑھتی سختیوں کی وجہ سے رسول اکرم(ص) نے مسلمانوں کے ایک گروپ کو حبشہ ہجرت کرنے کا حکم دیا تھا اور وہاں کے مسیحی حکمران نجاشی کے نام ایک پیغام بھی بھیجا تھا۔ حبشہ دو بار ہجرت کی گئی تھی۔ تاریخ کے مطابق پہلے تو ہجرت کرنے والوں کا راستہ روکنے کی کوشش کی گئی تھی اور پھر بعد ازاں حبشہ (موجودہ ایتھوپیا) میں نجاشی کو مہاجرین سے متعلق بہکانے کی کوشش کی گئی تھی۔ یہ کوششیں کرنے والا عمر بن العاص تھا۔ البتہ رسول کریم ﷺ کی جانب سے مقرر کردہ مہاجرین کے سرپرست جنابِ جعفر طیار بن ابوطالبؑ اور نجاشی کے مکالمے کے بعد نہ صرف نجاشی نے مہاجرین کو حبشہ میں سکونت اختیار کرنے کی اجازت دی بلکہ اُنہیں کشادہ دلی کے ساتھ خوش آمید بھی کہا۔ ایک مسیحی حکمران کا مسلمان مہاجرین پر یہ احسان ہمیشہ یاد رکھا جانا چاہئے، اگرچہ نجاشی بعد ازاں مسلمان ہوگیا تھا۔
یہ اسی ہجرت کا نتیجہ تھا کہ افریقہ میں اسلام متعارف ہوا اور پھیلا۔ جون بن حویؑ کا تعلق بھی اسی خطے سے تھا جنہوں نے اسلام قبول کیا اور پھر بعد ازاں مدینہ آگئے۔ یہاں سے جونؑ کے مناقب کا آغاز ہوتا ہے۔
چونکہ اُس دور میں غلاموں کی خرید و فروخت رائج تھی لہذا جونؑ کو مدینہ آنے پر فضل بن عباس نے خریدا اور پھر امام علیؑ نے جونؑ کو اُن سے خرید لیا۔ امام علیؑ یقینا آگاہ تھے کہ جونؑ کوئی عام انسان نہیں ہے، وہ جونؑ کے قلب کو دیکھ رہے تھے۔ جیسے اُنہوں نے میثمِ تمارؑ کے قلب کو دیکھا تھا۔
بعد ازاں امام علیؑ نے جونؑ کو ابوذر غفاریؑ کے سپرد کردیا اور تاریخ کے مطابق یہاں سے جونؑ اور ابوذر غفاریؑ کی بہترین دوستی کا آغاز ہوا۔ امام علیؑ کے ساتھ گزرے وقت کی وجہ سے امام حسنؑ و امام حسینؑ کے ساتھ تو جونؑ کی قلبی وابستگی پہلے ہی قائم ہوچکی تھی، ابوذر غفاریؑ کا ساتھ ملنے پر محمد و آل محمدؑ سے مزید مضبوط ہوتی چلی گئی۔ وہ ابوذر غفاریؑ کہ جن کے تقوے کو موازنہ رسولِ خدا(ص) نے حضرت عیسیؑ کے تقوے سے کیا۔

یہ بھی پڑھئے:   تربتِ مادرِ گرامی پر حاضری - حیدر جاوید سید

میں کبھی کبھی سوچتا ہوں کہ یہ واقعہ کربلا کا ہی اعجاز ہے جو ہم قاتلین امام حسینؑ کے ساتھ ساتھ دشمنانِ آلِ محمدؑ سے بھی کھل کر اظہارِ بیزاری کرسکتے ہیں وگرنہ واقعہ کربلا سے پہلے کی تاریخِ اسلام میں کہیں مصلحت کے پہرے ہیں اور کہیں جبر کے۔ شاید اسی لئے کہتے ہیں کہ امام حسینؑ نے کربلا میں چھپے ہوئے کرداروں کو بے نقاب کیا۔ آج چہار جانب بکھرے ہوئے ناصبیوں کو دیکھتا ہوں تو دل سے خدا کا شکر ادا کرتا ہوں کہ امام حسینؑ ہمیں ایک پیمانہ دے گئے، مظلوم سے محبت اور ظالم سے اظہار برائت کرنے کا۔
یہ سب مجھے ابوذر غفاریؑ کا نام لکھتے ہوئے یاد آگیا۔ بہرحال۔

جونؑ اور ابوذر غفاریؑ کو ایک ساتھ جلاطن کرکے شام بھیجا گیا تھا، وجہ تاریخ میں درج ہے۔ کہتے ہیں کہ شام میں بھی ان دونوں نے مل کر احتجاج کا سلسلہ جاری رکھا تھا، اختیارات و وسائل کے غلط استعمال پر تحفظات کا اظہار کیا تھا، یہاں تک کہ انہیں وہاں سے بھی جلا وطن کرکے جنوبی لبنان کے علاقے جبل الآمل بھیج دیا گیا تھا۔ یہ وہ مقام تھا جہاں ابوذر غفاریؑ نے جون بن حوی کے ساتھ مل کر علومِ آلِ محمدؑ کی ایسی تبلیغ کہ اس علاقے سے وہ جید علماء نکلے جن کے ناموں کے ساتھ اس علاقے کی نسبت سے لگا "الآملی” کا لفظ اپنا تعارف خود ہر دور میں کرواتا رہا۔ جیسے کہ حُر االآملیؒ ۔ یہ علاقہ اب بھی محبانِ آلِ محمدؑ کا مرکز ہے۔

بہرحال ابوذرؑ و جونؑ کو یہاں سے بھی جلاوطن کیا گیا اور مکہ و مدینہ کے درمیان صحرا میں بغیر پانی و خوراک کے چھوڑ دیا گیا۔ یاد رہے کہ یہ دونوں صحابی رسول(ص) تھے۔ ابوذرغفاریؑ اسی صحرا میں شہید ہوگئے، جن کی تدفین خبر ملنے پر امام علیؑ نے کی جبکہ جونؑ بن حویؑ زندہ رہے۔
۔
اس کے بعد جونؑ کا اگلا تذکرہ اُس وقت ملتا ہے جب امام حسینؑ کوفہ جانے کیلئے مدینہ چھوڑ رہے تھے۔ جونؑ کی عمر ستر برس ہوچکی ہے، کمر جھک چکی ہے لیکن وہ امام حسینؑ کے حضور پیش ہوکر اُن کے ساتھ کوفہ جانے کی درخواست کرتے ہیں۔ امام حسینؑ نے جواب دیا کہ جونؑ تم نے پہلے ہی آلِ محمدؑ کی بہت خدمت کرلی ہے، اب خود کو تکلیف مت دو۔ یہ وہ مقام تھا جہاں جونؑ نے وہ جملہ کہا کہ جس کے بعد امام حسینؑ نے آگے پڑھ کر اُن کی پیشانی کا بوسہ لیا اور سینے سے لگا لیا۔ جونؑ نے بس اتنا کہا تھا کہ میں جانتا ہوں کہ آپ مجھے اس لئے نہیں لیجانا چاہتے کیوں کہ میں سیاہ فام ہوں۔

جونؑ قافلہ حسینیؑ کہ ہمراہ کوفہ کی بجائے کربلا پہنچ گئے تھے اور پھر وہ رات آئی جب امام حسینؑ نے چراغ بجھا کر اپنے ساتھیوں سے کہا کہ جو جانا چاہتا ہے، وہ جاسکتا ہے۔ تمہاری جنت کی ضمانت میں دیتا ہوں۔ جب چراغ دوبارہ جلایا گیا تو امامؑ نے ہر ساتھی کو اپنی جگہ پر پایا، جیسے وہ شہادت کیلئے مکمل آمادہ ہوں۔ یہی وجہ تھی کہ امامؑ نے فرمایا تھا کہ جیسے ناصرین مجھے ملے، ویسے کسی اور کو نہ ملے۔

یہ بھی پڑھئے:   دودھ پینے والے مجنوں، اینٹی اسٹیبلشمنٹ کمرشل لبرل مافیا

جونؑ کو جنگ کرنے کی اجازت ملی اور اس ضعیف العمری میں، اِس صحابی رسولؑ نے ، امام علیؑ کے غلام اور ابوذر غفاریؑ کے بہترین دوست نے 25 یزدیوں کو جہنم واصل کیا۔ جنگ شروع کرنے سے پہلے جونؑ نے اپنا تعارف کرواتے ہوئے چند اشعار بھی پڑھے تھے جن میں لشکر یزید کو لشکر کفار کہہ کر مخطاب کیا تھا اور للکار کر کہا تھا کہ کیا تم اس سیاہ فام شخص کی تلوار کا اثر دیکھنا چاہتے ہو؟

بلاخر جونؑ بھی گھوڑے سے زمین پر آئے اور اپنی اُس خواہش کے مطابق شہید ہوئے کہ یا ابا عبداللہؑ، میں چاہتا ہوں کہ میرا خون بھی آپ کے خونِ اطہر کے ساتھ شامل ہوجائے۔ امام حسینؑ جونؑ کے پاس پہنچے اور یہ وہ مقام تھا جہاں امام حسینؑ نے جونؑ کا چہرہ تھام کر یہ تاریخی دعا کی

"اَللّهُمَّ بَیِّض وَجهَهُ وَ طَیِّب ریحَهُ وَ احشُرهُ مَعَ الأبرارِ وَ عَرِّف بَینَهُ و بَینَ مُحمدٍ و آلِ مُحمدٍ”
(پروردگار…اس کا چہرہ منور کردے اور ان کی بو کو خوشبو میں بدل دے،انہیں نیکوکاروں کیساتھ محشور فرما اورانہیں محمد وآل محمد کے درمیان باحیثیت بنادے۔ )

جون بن حویؑ ضریحؑ امام حسینؑ کے قریب گنجِ شہیداں میں مدفون ہیں۔ اُن کا نام زیارت ناحیہ میں ابوذر غفاریؑ کے ساتھ بالکل اُسی طرح آیا ہے جیسے اُن کا ساتھ ابوذرغفاریؑ کے ساتھ رہا۔

” اَلسَّلَامُ عَلَى جَوْنٍ مَوْلَى أَبِي‌ ذَرٍّ الْغِفَارِيِّ”

حُر بن یزید الریاحیؑ کی طرح جون بن حویؑ جیسا کردار ایک بار پھر کربلا کے طاقتور جذباتی، باطنی اور روحانی پہلو کا اظہار کرتا نظر آتا ہے جو کربلا کو چند ظاہری پہلووں میں پرکھنے والے بدقستموں کو دعوت فکر دیتا ہے کہ یہ کربلا نہ حادثہ ہے، نہ سیاسی مسئلہ، نہ دو خاندانوں کی جنگ اور نہ اقتدار کی جنگ۔ یہ امام حسینؑ کا سجایا ہوا وہ معیارِ حق و باطل ہے کہ جس کا ہر کردار امام حسینؑ نے اس سلیقے سے تیار کیا ہے کہ وہ آنے والے ہر دور میں انسانی دلوں کو پوری قوت سے اپیل کرتا رہے گا۔ یقین نہ ہو تو غور کر لیجئے، کون کون کہہ رہا ہے کہ "ہمارے ہیں حسینؑ”۔

جون بن حویؑ سے میرا پہلا تعارف مرحوم پروفیسر سجاد رضوی نے اُس مجلس میں کروایا جس میں میں ہمیشہ تبرک کی لالچ میں جاتا تھا۔ آج اتنے برس گزرنے کے بعد میں کوئی بڑا دعوی تو نہیں کرتا لیکن یہ ضرور کہہ سکتا ہوں کہ بچپن میں علی مسکن کے تبرک کا مجھے یہ فائدہ ہوا کہ آج اتنے برس گزرنے کے بعد جونؑ کی بارگاہ میں یہ تحریر ہدیہ کرسکوں۔ یہ وہ تبرک تھا جو دراصل علی مسکن سے مجھے ملا۔ اللہ پروفیسر سجاد رضوی اور شہید تجمل عباس کے درجات بلند فرمائے۔
۔
نوٹ: اس تحریر کیلئے ڈاکٹر عمار نکشوانی کے لیکچرز، چند مجالس اور قبلہ علیم رحمانی سے رہنمائی لی گئی۔

Views All Time
Views All Time
1101
Views Today
Views Today
1

2 thoughts on “جون بن حویؑ، ایک منور و معطر شہیدِ کربلا | نور درویش

  • 27/09/2017 at 3:08 شام
    Permalink

    Shared on my fb page, without prior permission, hope get post facto permission.

    Reply
    • mm
      28/09/2017 at 4:57 صبح
      Permalink

      برادرم کوئی مسئلہ نہیں شئیر کرنے کا اگر لنک شئیر کیا گیا ہے تو۔

      Reply

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: