جسٹس اقبال حمید الرحمٰن کا آسیہ بی بی کے مقدمے کی سماعت سے انکار

Print Friendly, PDF & Email

asia-bibiآسیہ بی بی کی سزائے موت کے خلاف نظرثانی کی درخواست کی سماعت شروع ہوئی تو بینچ کے سربراہ جسٹس میاں ثاقب نثار نے دائیں جانب بیٹھے ہوئے جج اقبال حمید الرحمٰن کی ایما پر بات کرتے ہوئے کہا کہ ‘چونکہ وہ اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس کی حیثیت سے سابق گورنر پنجاب سلمان تاثیر کے قتل کے مقدمے کی سماعت کر چکے ہیں اور یہ مقدمہ بھی اس سے کسی حد تک منسلک ہے اس لیے وہ اس کی سماعت نہیں کر سکتے۔’

عدالت کا کہنا تھا کہ وہ اب نظرثانی کی اس درخواست کو واپس چیف جسٹس کو بھجوا دےگی اور چیف جسٹس ہی اس درخواست کی دوبارہ سماعت کرنے سے متعلق احکامات دیں گے۔

آسیہ بی بی کے خلاف جون 2009 میں توہین رسالت کے الزام میں مقدمہ درج کیا گیا تھا۔ مقدمے میں الزام لگایا گیا تھا کہ انہوں نے اپنے ہمراہ کھیتوں میں کام کرنے والی خواتین کے ساتھ بحث کے دوران پیغمبر اسلام ﷺ کے خلاف توہین آمیز کلمات کہے تھے۔ اس مقدمے کے مدعی ننکانہ صاحب کی مسجد کے امام محمد سالم تھے۔اگلے برس 2010 میں انھیں اس مقدمے میں موت کی سزا سنائی گئی تھی۔

پانچ بچوں کی ماں آسیہ بی بی نے ہائی کورٹ میں اپنی اپیل میں موقف اختیار کیا تھا کہ مقامی عدالت نے توہین رسالت کے جرم میں سزا سناتے وقت حقائق کو نظر انداز کیا اور بغیر کسی ٹھوس ثبوت کے انھیں سزا سنا دی تھی جو قانون کی نظر میں قابل پذیرائی نہیں ہے۔

2014 میں لاہور ہائیکورٹ کے دو رکنی بنچ نے آسیہ بی بی کی سزائے موت کے خلاف اپیل مسترد کر دی تھی اور ماتحت عدالت کی جانب سے انھیں دینے جانے والی سزا کو برقرار رکھا۔ آسیہ بی بی کو 2010 میں صوبہ پنجاب کے ضلع ننکانہ کی عدالت نے توہین مذہب کے الزام میں موت کی سزا سنائی تھی۔

آسیہ بی بی کی درخواست پر سپریم کورٹ کے فیصلے کی روشنی میں مذہبی تنظیموں کی طرف سے کسی ممکنہ ردعمل سے بچنے کے لیے
سپریم کورٹ کی عمارت کے باہر پولیس اہلکاروں کی خاصی بڑی نفری تعینات کی گئی تھی۔

تاہم کمرہ عدالت میں لال مسجد فاونڈیشن کے عہدیداروں اور ایسے افراد کی قابل ذکر تعداد موجود تھی جو سلمان تاثیر کے قتل کے مقدمے میں موت کی سزاasia-bibi-protest پانے والے ممتاز قادری کی نظر ثانی کی درخواست کی سماعت پر سپریم کورٹ میں آیا کرتے تھے۔

آسیہ بی بی کی سزا کی معافی اور رہائی کے لئے بہت سے افراد سرگرم رہے۔ آسیہ بی بی کی رہائی کے لئے کافی مظاہرے بھی کئے گئے۔ یاد رہے کہ سابق گورنر پنجاب سلمان تاثیر کو بھی ان کے محافظ ممتاز قادری نے آسیہ بی بی کے کیس میں بیان دینے پر قتل کیا تھا۔

Views All Time
Views All Time
259
Views Today
Views Today
1
یہ بھی پڑھئے:   ایٹم بم نہیں بنائیں گے - جنرل ضیا کا وعدہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: