پانامہ کیس: وزیرِاعظم سے تین سوالات پر وضاحت طلب

Print Friendly, PDF & Email

پاکستان کی عدالتِ عظمی نے پانامہ لیکس کے مقدمے میں وزیرِ اعظم سے تین سوالات پر

 وضاحت طلب کرتے ہوئے سماعت سات دسمبر تک کے لیے ملتوی کر دی ہے۔

یہ تین سوالات پاکستان تحریک انصاف کے وکیل نعیم بخاری اور عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید نے درخواستوں کی سماعت کے دوران پیش کیے جانے والے دلائل میں اٹھائے تھے۔

چیف جسٹس انور ظہیر جمالی کی سربراہی میں عدالت عظمی کے پانچ رکنی بینچ نے منگل کو جب اس معاملے کی سماعت کی تو بینچ کا کہنا تھا کہ وزیرِ اعظم پاکستان میاں محمد نواز شریف پر تین الزامات ہیں۔ پہلا یہ وہ بلواسطہ یا بلاواسطہ طور پر لندن میں خریدے گئے فلیٹس سے فائدہ حاصل کرتے رہے۔ دوسرا الزام یہ کہ وزیرِ اعظم کے بچوں نےلندن میں جو فلیٹس خریدے اُس کے پیچھے دراصل نواز شریف تھے اور تیسرا الزام ہے کہ وزیر اعظم نے اپنی
تقریروں کے دوران سچ سے کام نہیں لیا گیا لہٰذا وہ آئین کی آرٹیکل 62/63 کی زد میں آسکتے ہیں۔

عدالت کا کہنا تھا کہ اس معاملے میں وضاحت ضروری ہے۔

سماعت کےآغاز میں پی ٹی آئی کے وکیل نعیم بخاری نے اپنے دلائل سمیٹتے ہوئے اِس بات پر زور دیا کہ مریم نواز سمیت تینوں بچے نواز شریف کی زیرِ کفالت تھے اور مستقل رہے لیکن اُنھوں نے ٹیکس کی وجوہات کی بنا پر اُنھیں ظاہر نہیں کیا۔

نعیم بخاری نے معاملے کی روزانہ کی بنیاد پر مقدمے کی سماعت جاری رکھنے کی استدعا کی جس پر جسٹس عظمت سعید نے کہا کہ یہ معاملہ ہم پر چھوڑ دیں اسے ہم خود ریگولیٹ کر لیں گے۔

 

Views All Time
Views All Time
283
Views Today
Views Today
1
یہ بھی پڑھئے:   کیا عمران خان اپنی پالیسیز پر عمل درآمد کر پائیں گے؟

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: