میں چپ کیوں نہیں ہوسکتا – عامر حسینی

Print Friendly, PDF & Email

دارشکوہ کو گرفتار کروانے والا آدمی وہ تھا جسے کبھی بادشاہ وقت سے دارشکوہ نے چھڑوایا تھا۔دارشکوہ کا زندہ رہنا اورنگ زیب کے مفاد میں نہ تھا اور دارشکوہ کا زندہ رہنا اورنگ زیب کے اردگرد جمع کٹھ ملائیت اور طاقت کے نشے میں چور اور مذہبی بلعم باعوروں کے لئے بھی بہت ہی خطرناک تھا۔دارشکوہ جس نے ہندوستان کی شناخت کی کثرت اور یہاں رہنے والوں کے درمیان افکار کی رنگا رنگی کو حسن تہذیب قرار دیا تھا تقسیم کرنے والوں کے لئے خطرے کا نشان تھا۔تو اس مقصد کے لئے دارشکوہ کو اسلام سے باغی بلکہ سرے سے کسی بھی مابعدالطبعیات کو ماننے سے انکاری بتلادیا گیا اور اس کے ملحد ہونے کا اسقدر زیادہ پروپیگںڈا ہوا کہ دہلی کے رہنے والے بھی یہ یقین کرنے لگے کہ دارشکوہ ایسا ہی ہوگا جیسے صاحبان جبہ و دستار بتارہے ہیں۔

میں ایک جگہ پڑھ رہا تھا کہ حجاج بن یوسف ثقفی کو پتا چلا کہ ان کے مخالف سیاسی کیمپ یعنی علوی کیمپ کا ایک انتہائی اہم آدمی عطیہ عوفی /کوفی خراسان چلا آیا ہے جہاں اس کا بھتیجا محمد بن قاسم ثقفی گورنر لگا ہوا تھا۔حجاج بن یوسف نے محمد بن قاسم سے کہا کہ اگر عطیہ عوفی گرفتار ہوجائے تو اس کے سامنے دو آپشن رکھنا،ایک آپشن یہ کہ حضرت علی کرم اللہ وجہہ الکریم کو برا بھلا کہے اور نہ کہے تو دوسرا آپشن کوڑے کا ہے۔عطیہ عوفی نے کوڑے کا آپشن چن لیا اور سچائی سے روگردانی نہیں کی

آپ حجاج بن یوسف کے زمانے میں ہوتے تو حجاج بن یوسف اپنے ظالمانہ اقدامات کے بارے میں آپ کو قرآن و سنت سے دلائل پیش کرتا نظر آجاتا۔وہ اس زمانے میں جو حضرت علی کرم اللہ وجہہ الکریم سے محبت کرتا اور آپ کے خاندان سے عقیدت کا اظہار کرتا تو اسے کوڑے لگواتا، قید ميں ڈالتا اور دوسری جانب وہ تہجد گزار تھا۔نماز پنجگانہ کی امامت کرتا، قرآن پاک کے اعراب اس نے لگوائے۔گویا اس کی مذہبیت پورے عروج پہ تھی اور وہ عبادات کے معاملے میں بہت پنکچوئل تھا۔بلکہ اس کے زہدو تقوی بارے روایات کا نہ ختم ہونے والا انبار ملے گا۔

ہٹلر کہا کرتا تھا کہ وہ خدا کی خوشنودی حاصل کرنے کے لئے جرمنی سمیت پوری دنیا سے یہودیوں کا خاتمہ کررہا ہے۔اور اس زمانے میں جرمنی کے اندر قومی سرمایہ داروں اور درمیانے طبقے سے تعلق رکھنے والے لوگوں کی اکثریت کو ہٹلر کی اس بات کا پورا یقین تھا۔اور پروپیگنڈا اسقدر زیادہ تھا کہ یہودی جیسے کہ وہ تھے اس کو ماننے کی بجائے نازی یہودیوں کے بارے میں جو کہتے تھے یہودیوں کو ویسا ہی خیال کرتے تھے۔مجھے یہاں پہ مائیکل فوکو یاد آیا جو اس طرح کی سوچ کو سٹریٹجک وردودھ یعنی تزویراتی دشمنی کہتا ہے اور وہ لکھتا ہے
سٹریٹجک ورودھ یا دشمنی کرنا فاشزم ہے۔۔۔۔۔۔ فاشزم ہم سب کے اندر ، سب کے دماغوں میں اور ہمارے روزمرہ کے رویوں میں پوشیدہ ہوتا ہے،فاشزم ہمیں طاقت کا پجاری بناتا ہے اور اور ہر اس شئے کا خواہش مند ہوتا ہے جو غالب آجاتی ہو ہم پہ یا ہمارا استحصال کرتی ہو۔
مجھے یاد نہیں پڑتا کہ کس نے یہ کہا تھا کہ انتہا پسندی کو معقول دماغ اس لئے پسند نہیں ہیں کہ ان کی بصیرت ایک فلٹر کی طرح ہوتی ہے جو انتہا پسندی کے مضحکہ خیز اور ردی ہونے کو سامنے لے آتی ہے اور اسی سے انتہا پسندی کو بڑا خوف آتا ہے۔لیکن اندر کے اس خوف کو انتہا پسندی لوگوں کو ڈرانے ، دھمکانے اور ان میں عدم تحفظ پیدا کرنے کے لئے استعمال کرتی ہے اور اس کا فائدہ انتہا پسندی کو یہ ہوتا ہے کہ کئی ایک معقول ذہنوں کی معقولیت اس ڈر ،خوف اور عدم تحفظ کے ماحول میں گم ہوجاتی ہے۔

کیا ایسا نہیں ہورہا کہ ہمارے ہاں ایک اسٹراٹیجک دشمنی ہورہی ہے روشن دماغوں کے خلاف اور ایسی خوف اور عدم تحفظ کا خوف پیدا کیا جارہا ہے کہ لوگ اپنی مرضی اور خواہش سے بولنے کی بجائے انتہا پسندی کے قائم کئے جانے والے ضابطوں کے تحت بات کریں۔اور ایسی اسٹراٹیجک دشمنی کا روپ ہے توہین مذہب کا الزام عائد کیا جانا۔آپ کو ایسا شخص بناکر پیش کرنا کہ جسے دوسروں کے عقائد ، مذہبی خیالات اور دوسروں کی قابل احترام ہستیوں کا زرا بھر بھی لحاظ یا احترام نہیں ہے اور اس کا زندہ رہنا یا اپنے علم کی روشنی کے ساتھ زندہ رہنا ناقابل برداشت ہوگیا ہو۔سٹرٹیجک دشمنی بصیرتوں کو سلب ہی کرتی ہے۔اس لئے کسی انسان کے جینے حق کو چھین کر جب اسے غائب یا قتل کردیا جاتا ہے تو ایک بہت بڑا حلقہ اس غائب کئے جانے یا قتل ہوجانے کو ٹھیک ہی خیال کرنے لگتا ہے۔
میں جب بلوچ اور سندھیوں کی مسخ شدہ لاشیں ملنے یا ان کے اچانک غائب کردئے جانے کا ذکر کرتا ہوں تو مجھے اکثر یہ جملے سننے کو ملتے ہیں کہ انھوں نے کچھ کیا ہی ہوگا ، ایسے تو کوئی نہیں مارتا۔میں لوگوں کو کہتا ہوں کہ آپ نے بالکل درست کہا کہ یہ ایسے ہی بنا کسی وجہ کے نہیں مارے گئے بلکہ وجہ ان لوگوں کی سیاسی رائے ہے جس کا احترام سرمایہ کی لوٹ مار کے سامنے قربان کردیا گیا ہے۔اب سیاسی رائے اور اختلاف کرنا جرم ہے اور ایسا جرم کہ آپ یا تو جبری گمشدہ ہوں یا آپ سانس لینے کے حق سے بھی محروم کردئے جائیں؟ اس کا فیصلہ لوگوں کو خود کرنا ہے۔

اردن کے ناھض حتر یاد ہیں آپ کو ؟ اردن کا یہ عیسائی نژاد عرب صحافی عدالت کے سامنے توہین مذہب کے کیس کا سامنا کررہا تھا کہ ایک دن عدالت کے احاطے ہی میں اسے گولیاں مار کر ہلاک کردیا گیا۔اسے جان سے ماردینے میں الجزیرہ جیسے ٹی وی چینلوں کا ہاتھ تھا جنھوں نے اس کے خلاف اسقدر پروپیگنڈا کیا ، سٹرٹیجک دشمنی کی کہ ایک آدمی نے ناھض حتر کو جان سے ماردینے میں ہی اپنے مذہب کی بقا سمجھ لی۔

ہٹلر نے کیا کیا تھا کہ اس نے آئن سٹائن ، سگمنڈ فرائیڈ جیسوں کو ختم کرنے کی کوشش کی کیونکہ ان جیسے روشن دماغ اسے اپنے نازی ازم کے خلاف سب سے بڑی روکاوٹ لگتے تھے۔پاکستانی سماج میں بھی روشن دماغوں کے خلاف تاریکی کی قوتوں نے تزویراتی دشمنی کا ہتھیار استعمال کیا ہے اور اس سے خوف، عدم تحفظ پھیل رہا ہے۔مرا فرض بنتا ہے کہ اس خوف اور عدم تحفظ کی فضاء کو ختم کرنے کی اپنی سی کوشش کروں۔

Views All Time
Views All Time
673
Views Today
Views Today
1
یہ بھی پڑھئے:   مانکیالہ اسٹوپا، گندھارا تہذیب کی ایک یادگار

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: