Skip to Content

Qalamkar | قلم کار

جہالت، ظلم اور ناانصافی کے خلاف برسرپیکار

ابلیس سے ملاقات

by مئی 30, 2016 مزاح
ابلیس سے ملاقات
Print Friendly, PDF & Email

jerryجمعہ کی نماز کی غرض سے گھر سے نکلا تھا۔ پاپا سے کرایہ کے 30 روپے لیے اور روڈ پہ چنگ چی کا انتظار کرنے لگا۔ کافی دیر گزر گئی لیکن کوئی چنگچی نہیں آیا۔ کہتے ہیں جب بھی کوئی اچھا کام کرنے جا رہا ہو تو شیطان اُسے روکتا ہے۔ ایسا ہی کچھ میرے ساتھ ہوا۔ جانوں کی کال آئی اور بولی کالج سے گھر جا رہی ہوں راستے میں قلفی والے سے قلفی لوں گی،میرا دیدار کرنے آنا ہو تو آجاؤ۔ ابھی فیصلہ کرنے کا سوچ ہی رہا تھا کہ دو شخص لمبی داڑھی میں سفید شلوار قمیض پہنے آئے اور بولے کالج چھوڑ دیں تمہیں؟؟ چونکہ میرا نماز پڑھنے کا پختہ ارادہ ہوچکا تھا اس لیے میں نے کہہ دیا مجھے کالج نہیں نماز پڑھنے جانا ہے۔ وہ بولے ارے ماشااللہ،، ہم بھی وہیں جارہے ہیں۔ یہ کہہ کر اس نے مجھے موٹر سائیکل پہ بیٹھنے کو کہا۔ چونکہ کافی دیر ہوگئی تھی اور چنگچی نہیں آرہا تھا اس لئے چاہتے نه چاہتے میں اُن لوگوں کے ساتھ بائک پہ بیٹھ گیا۔ ہوا وہی جس کا ڈر تھا، ایک لمبی داڑھی والا شخص میرے آگے ایک پیچھے گویا رضیہ ملاؤں میں پھنس گئی۔ آگے والا بھی جان بوجھ کر بار بار اچانک بریک مارتا رہا۔ خیر،،،۔سارے رستے پیچھے والے کو اور اُسکے بکواس سوالات کو سہتا رہا۔ اللہ جانتا ہے کافی بے چین تھا۔ دل سے منزل تک رسائی کی دعا کر رہا تھا۔ دعا کی قبولیت کی گھڑی آئی اور ایک سنی بریلوی مسجد کے سامنے بائک رُکی۔ آگے بیٹھا شخص موٹرسائیکل سے اُترا اور سلام کر کے مسجد میں چلا گیا۔ یہاں سے ہماری منزل دوسری مسجد تھی۔ پیچھے بیٹھا شخص موٹر سائیکل چلانے کی غرض سے آگے بیٹھا اور یوں آئی ہماری باری۔۔۔ سوالات پوچھنے کی۔۔۔۔ ہاں تو میاں اپنا تعارف تو کرادیں، میں نے پوچھا ۔ وہ مسکرایا اور بولا میں اللہ کا بندا ابلیس ہوں۔ اچھا تو تم ہو وہ جو لوگوں کو پوسٹ شیئر کرنے سے روکتے ہو۔ بڑا سنا ہے تمہارا زکر، آج مل بھی لیا، خیر کوئی خوشی نہیں ہوئی تم سے مل کے، اللہ جانتا ہے تمہاری صفت کے میرے خاندان میں بہت ہیں۔ اچھا ایک بات تو بتاؤ، یہ کنکریاں والا کیا سین ہے؟ِ؟ میرے سوال پہ شیطان خفا ہوگیا اور عربی میں کچھ پڑھنے لگا۔ یہ دیکھ کے میں گھبرایا اور ابلیس کا موڈ ٹھیک کرنے کے لئے میں نے بات ویب سائٹ کی شروع کردی۔ پھر کیا تھا،ابلیس بھی فارم میں اگیا۔ یہاں سے ایک ویب سائٹ وہ بتاتا آگے سے ایک میں۔ ایک وہ ایک میں، مقابلہ کافی دیر چلتا رہا اور پھر میں نے شرارتی امریکہ والا کارڈ پھینکا اور بازی لے گیا۔ ابلیس نے بھی میرے فن کی داد رسائی کی جس سے میری کافی حوصلہ افزائی ہوئی۔ وقت اچھا گزر رہا تھا کہ کچھ ہی دیر میں مسجد آگئی۔ ابلیس مجھ سے مخاطب ہوا اور بولا "جری تم اندر جاؤ میں بائک کھڑی کر کے آرہا ہوں۔ یہ کہہ کر وہ بائک گھڑی کرنے چلا گیا اور میں انتظار کرتا رہا۔ کافی دیر تک جب وہ واپس نا آیا تو میں مجبوراََ مسجد کے اندر آگیا، باتھ روم گیا، واپس آیا، وضو کیا، اور مسجد کے احاطہ میں پہنچا۔ آنکھیں اُس وقت کھلی رہ گئیں جب ممبر پہ براجمان شخص کو دیکھا۔
موصوف نے میری طرف دیکھا آنکھ کا اک کونه دبایا اور وعظ شروع کر دیا..

Views All Time
Views All Time
572
Views Today
Views Today
4
یہ بھی پڑھئے:   بابو ملک براستہ میانوالی - سید بدر سعید
Previous
Next

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

%d bloggers like this: