Skip to Content

Qalamkar | قلم کار

جہالت، ظلم اور ناانصافی کے خلاف برسرپیکار

میری محبوبہ کا خط

by مئی 21, 2016 مزاح
میری محبوبہ کا خط
Print Friendly, PDF & Email

jerryمکان نمبر 32/6 نیو کراچی آٹھ نمبر
15 مئی 2016
پیارے جری،
اسلام علیکم
کیسے ہو؟ کال کر رہے تھے تم؟ میلاد میں تھی اس لئے کال اُٹھا نہیں سکی، بڑی لمبی عمر ہے تمہاری، کل رات شجاعت سے بات کررہی تھی تو تمہارا ذکر آگیا، پوچھ رہا تھا میرا اور تمہارا کیا چکر ہے، میں نے کہہ دیا یو آر جسٹ مائے فرینڈ، نتھنگ ایلس،،،،، جری مجھے جھوٹ بولنا پڑا، تمہیں تو پتہ ہے شجاعت علاقے کی رضیہ خالہ ہے،اگر جھوٹ نا بولتی تو ہر جگہ پہنچا دیتا، پچھلی بار بھی میرا اور سجاد کے پیار کا ڈھنڈورا پیٹ دیا تھا ، وہ تو شُکر ہے سجاد نیو کراچی سے بفرزون شفٹ ہوگیا۔ اتنا چھچھورا تھا کہ میں بتا نہیں سکتی، اُس دن میں ٹیوشن جا رہی تھی تو منگل بازار والی گلی میں اپنی سکوٹر لے کر آیا اور بولا جانوں بیٹھ جاؤ، آئس کریم کھانے چلتے ہیں، مجھے تو بہت غصہ آیا لیکن آئس کریم کھانے سے ٹھنڈا ہوگیا۔ خیر، چھوڑو یہ سب، تمہارا خط ملا تھا۔ پلیز تم عابد کے ہاتھ نہ بھیجا کرو، وہ پہلے خود پڑھتا ہے بعد میں مجھے دیتا ہے، بُدھ والے دن تو حد ہی ہوگئی تھی، تمہارا خط دینے آیا تھا تو ابّا جان نے پکڑ لیا اور اُس سے خط لے کے دیکھنے لگے،وہ تو شُکر ہے ابّا جان اَن پڑھ ہیں، میں نے کہہ دیا یہ میٹرک کے گیس پیپرز ہیں۔ جانوں قسمت میں کیا لکھا تھا کہ تم آسٹریلیا چلے گئے اور میں انگلش لینگویج کرتی رہ گئی، جانے کب وہ دن آئیں گے جب ہماری شادی ہوگی، جانوں، شادی سے یاد آیا، تمہیں مطلع کرتی چلوں کہ امی میرا رشتہ پھپو کے بیٹے اویس سے کرنے کی خواہشمند ہیں،وہ مجھے بالکل بھی پسند نہیں ہے، ایک تو گٹکا کھاتا ہے اُوپر سے کبوتر باز۔ میں مر جاؤں گی اویس بھائی سے شادی نہیں کروں گی۔،،تمہیں پتہ ہے شہنشاہ بھی چوکیدار بھرتی ہوگیا ہے، مزے کی بات وہ اب بھی خود کو شہنشاہ ہی سمجھتا ہے، لول، جری، تمہارا خط پڑھ رہی تھی تو یُسریٰ بار بار بول رہی تھی کہ آپ کی تصویر دکھاؤں، تصویر دکھائی تو ہنس کے بولی اس کے کان اس کے منہ سے بھی بڑے ہیں ، میرا تو ہانسا ہی نکل گیا۔ آگے سے ایک دو جگتیں میں نے مار دیں.منیرا بتارہی تھی کہ بیوٹینشن کے کورس کا بہت اسکوپ ہے اس لئے میمن فاؤنڈیشن میں داخلہ لے لیا ہے میں نے، واپسی میں واٹر پمپ سے ہوتی ہوئی آئی تھی تو راستے میں میں نے J ایلفابیٹ کا کی چین لیا ۔ آج اسکول لے کر گئی تھی، میری کلاس والا جاوید باپو سمجھ رہا ہے میں نے اُس کی محبت میں لیا ہے، بندا گرمی میں رہ لے خوش فہمی میں نا رہے۔
جری…..مجھے پتہ ہے تمہارا ہاتھ تنگ چل رہا ہے آج کل اوپر سے آسٹریلیا میں پانی کا بل بھی دینا پڑتا ہے اس لئے خط کے ساتھ عطر بھیج رہی ہوں خالو سعودیہ سے لائے تھے، اُمید ہے تمہارے کافی کام آئے گا۔
ڈبے میں ڈبہ ڈبے میں کیک،
میرا جری لاکھوں میں ایک۔
خط اور عطر مل جائے تو مجھے میسج کردینا، جواب نہ آئے تو سمجھ جانا بیلنس نہیں ہے۔
واسلام،
تمہاری جانوں،
رشیلہ

Views All Time
Views All Time
574
Views Today
Views Today
2
یہ بھی پڑھئے:   ڈھینگلے
Previous
Next

One commentcomments

  1. Rasheela is so cute…the way she writes "lol” was so innocent…good work Jari

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

%d bloggers like this: