Skip to Content

Qalamkar | قلم کار

جہالت، ظلم اور ناانصافی کے خلاف برسرپیکار

زندہ معاشروں کی پہچان

by جون 15, 2016 بلاگ
زندہ معاشروں کی پہچان
Print Friendly, PDF & Email

zahra shahکچھ روز پہلے ایک ٹی وی ٹاک شو کے دوران حافظ حمداللہ کی ماروی سرمد صاحبہ کے ساتھ نازیبا طرزِ گفتگو اور ہتک آمیز رویئے نے میرے ذہن میں ایک سال پہلے برطانیہ میں ہونے والے ایک واقعے کی یاد تازہ کردی۔
ہوا کچھ یوں تھا کہ مشہور نوبل انعام یافتہ برطانوی سائنسدان سر ِٹم ہنٹ نے پچھلے سال شمالی کوریا میں منعقدہ ایک سائنس کانفرس کے دوران، خواتین سائنسدانوں اور ریسرچرز کے بارے میں اپنے خیالات کا اظہار کچھ اس طرح سے کیا، ان کے ساتھ کام کرنے سے ایک مسئلہ درپیش ہوتا ہے کہ آپ کو ان سے پیار ہو جاتا ہے یا وہ آپ کے پیار میں مبتلا ہو جاتیں ہیں۔ اور جب آپ ان کے کام پر تنقید کرتے ہیں تو وہ رونے لگ جاتی ہیں۔ اس لیئے سائنس کی بھلائی کے لیے مردوں اور عورتوں کے لیے علیحدہ لیباریٹریز ہونی چاہیئے۔
ان خیالات کا اظہار ٹم ہنٹ کو بہت مہنگا پڑا۔ سائنس، جرنلسٹس، حقوقِ نسواں کے علمبرداروں اور خواتین سائنسدانوں اور ریسرچرز حتیٰ کہ ان کے قریبی دوستوں نے، جن کے ساتھ ٹم ہنٹ نے اکٹھے کئی دہائیوں تک تحقیقی کام کیے تھے، ٹم ہنٹ کو خوب آڑے ہاتھوں لیا۔ اور اسے اس قدر تنقید کا نشانہ بنایا کہ اسے اپنے یونیورسٹی کالج لندن کے اعزازی عہدے اور روئل سوسائٹی کی ایوارڈ کمیٹی سے مستعفی ہونا پڑا۔ اگرچہ بی بی سی کے ساتھ کیے گئے اپنے انٹرویو میں انہوں نے اپنی کہی ہوئی بات پر معافی مانگتے ہوئے یہ واضح کیا تھا کہ انہوں نے یہ بات مزاح میں کی تھی مگر اس کے باوجود انہیں اس بے جا مزاح کی بہت بھاری قیمت چکانی پڑی۔
یہ تھی ایک زندہ اور مہذب معاشرے کی مثال۔ جہاں عورتوں کو برابر کے حقوق صرف کتابوں میں نہیں بلکہ عملی طور پر حاصل ہیں۔
اب دیکھنا یہ ہے کہ ماروی سرمد کے ساتھ تذلیل آمیز رویہ روا رکھنے کی پاداش میں حافظ حمداللہ پر ہمارے سوشل ایکٹیویسٹس، صحافی حضرات اور عام عوام مستعفی ہونے یا کم از کم معافی مانگنے کے لیئے کتنا دباؤ ڈالتے ہیں۔
نجانے مجھے ایسا کیوں لگتا ہے کہ ایک ایسا معاشرہ جہاں ایک ہفتے کی قلیل سی مدت میں تین چار عورتوں کے زندہ جلا دینے پر کسی کے کان تک جوں بھی نہ رینگی ہو وہاں ایک عورت کی ایک مذہبی سکالر کے ہاتھوں صرف زبانی کلامی تذلیل اتنی بڑی بات نہیں جس کو جواز بنا کر اس مذہبی سکالر کو اپنے کیے کی معافی مانگنے پر مجبور کیا جا سکے۔ جس معاشرے میں، بقول حافظ حمداللہ کے، صرف اپنی ماں، بہن کی عزت کی جاتی ہوں وہاں کسی دوسری عورت کی بے عزتی پر کسی کی غیرت جوش نہیں مارتی۔
حیف صد حیف کہ حافظ حمداللہ جیسے لوگ جو عورتوں کو ذرا سی چادر سر سے سرکنے پر سخت سرزنش کرتے ہیں اور بات بات میں انہیں جہنم کا ایندھن بننے کے مژدے سناتے رہتے ہیں وہ شخص ساری عوام کے سامنے، روزے کی حالت میں کسی عورت کو طوائف بلاتا ہے اور اسے شلوار اتارنے کی دھمکی دیتا ہے اور کچھ لوگ اس کی اس بیہودہ بات کو حق پر ثابت کرنے کے لیئے جواز ڈھونڈتے ہیں اور اس نازیبا حرکت کا دفاع کرتے نظر آتے ہیں۔ اور تو اور کئی لوگ تو الٹا اس عورت کی کردار کشی کرنے پر اتر آتے ہیں۔
بعض لوگ ایسے موقعوں پر چپ سادھ لیتے ہیں۔ یا پھر فتوؤں کے ڈر سے غیر جانبدارانہ موقف اختیار کرکے پتلی گلی سے صاف نکل جاتے ہیں۔ ایسے لوگ بھی حافظ حمداللہ جتنے ہی قصوروار ہوتے ہیں۔اب ایک ایسے بے حس، مردہ اور سڑے ہوئے معاشرے میں حافظ حمداللہ جیسی شخصیت سے یہ توقع رکھنا کہ وہ اپنی غلطی کی معافی مانگتے ہوئے مستعفی ہو جائے ایک مضحکہ خیز بات معلوم ہوتی ہے۔

Views All Time
Views All Time
3636
Views Today
Views Today
1
یہ بھی پڑھئے:   مسلے پھول | شاہانہ جاوید
Previous
Next

One commentcomments

  1. What he said on the show reflects not his real thought but, this is a thought patterns of all mullahs. Hifiz Hamdullah and his sahabas are in involved in raping women and children in the recent history. This is not something new from them

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

%d bloggers like this: