حجاب اور اس کا اسلامی تصور – حنا لیاقت

Print Friendly, PDF & Email

اسلام اور اسلامی نظام ِ حیات، ایک پاک وصاف معاشرے کی تعمیر اور انسانی اخلاق وعادات کی تہذیب کرتا ہے۔ اسلام نے جہالت کے رسم ورواج اور اخلاق وعادات کوجو ہرقسم کے فتنہ وفساد سے لبریز تھے، یکسر بدل کر ایک مہذب معاشرے اور تہذیب کی داغ بیل ڈالی، جس سے عام انسان کی زندگی میں امن ، چین اور سکون ہی سکون درآیا۔اسلام یہ چاہتا ہے کہ عورت کا تمام ترحسن وجمال، اس کی تمام زیب وزینت اور آرائش وسنگھار میں اس کے ساتھ صرف اس کا شوہر شریک ہو کوئی دوسراشریک نہ ہو، عورت اپنی آرائش اور جمال صرف اپنے مرد کے لئے کرے ۔اگر ہم اپنے چاروں اطراف نظر ڈالیں تو بخوبی اندازہ کر سکتے ہیں کہ احکام الٰہی سے اعراض اور روگردانی کے کیسے کیسے بھیانک اور عبرت ناک مناظر سامنے آرہے ہیں۔
مغربی دنیا خصوصاً یورپ اور امریکی معاشرے میں جہاں کسی قسم کے پردے اور حجاب کا گزر نہیں، جہاں ہرطرف لطف اندوزی، ہیجان خیزی ، شہوت پرستی اور گوشت پوست کی لذت اندوزی کا سامان ہورہا ہے
اسلام نے عورت پر جو فرائض عائد کئے ہیں وہ ا س قدر اہم ہیں کہ انہیں غیر ضروری سمجھ کر ترک کردینا نہایت خطر ناک غلطی ہے۔ عورت کے فرائض اس قدر وسیع اور ہمہ گیر ہیں کہ وہ اگر ان کی طرف کما حقہ توجہ دے تو اسے کسی دوسری سرگرمی کی جانب دیکھنے کا وقت بھی نہ ملے۔ حجاب کا مقصد ستر حاصل کرنا اور اپنے آپ کو فتنہ سے بچانا ہے
اﷲ پاک نے ارشاد فرمایا
اور دوپٹے اپنے گریبانوں (سینوں) پر ڈالے رہیں (سورہ نور پارہ نمبر ۱۸)
آج میڈیا ایک بے لگام گھوڑے کی طرح دوڑتا پھر رہا ہے، حکمرانوں اور نگہبانوں کو اسے لگام سے پکڑنے کی ضرورت کا محسوس نہ ہونا ان کی بے غیرتی پر دلالت کرتا ہے
اے اسلامی تہذیب وثقافت کے علمبردارو!
یقینا آج اس سازش کو سمجھنے کی اشد ضرورت ہے۔ بت پرستی کا فروغ، جسے رب العالمین نے ظلم عظیم قرار دیا۔ ہمارے گھروں میں دیکھا جارہاہے۔ انٹرٹینمنٹ اور گلیمر کے نام پر حجاب کے خلاف عالمی سازشوں کو سمجھنا اور اس کا تدارک وقت کا اہم تقاضا ہے۔ آدھا تیتر آدھا بٹیر جیسا مسلمان بننا اور کچھ اسلام پر عمل کرنا اور کچھ پر عمل نہ کرنا، اﷲ عزوجل کی بارگاہ میں قابل قبول نہیں۔
اے ناموس حجاب کی پاسبان ماؤں، بہنوں،،بیٹیوں، یقینا شیطان اور شیطانی طاقتیں تو یہی چاہتی ہیں کہ تمہیں بے پردہ کردیں، تمہارے اندربے حیائی کا فروغ ہو، تمہیں حجاب اور پردہ سے دور کرکے تمہاری دنیا و آخرت تباہ و برباد کرڈالیں لیکن نہیں نہیں۔ تم نے اﷲ اور اس کے رسولﷺ کا کلمہ پڑھا ہے۔ تم نے اسلام کو بطور دین قبول کرلیا ہے اور تمہارا دین تم سے یہ تقاضا کرتا ہے کہ تم باپردہ رہو۔ تم حجاب کو مضبوطی سے اپنی عملی زندگی میں نافذ کردو۔ورنہ یاد رکھو، جو مردوں کی مشابہت کریں اور وہ مرد جو عورتوں کی مشابہت کریں ان پر لعنت ہے اﷲ اوراس کے رسولﷺ اور تمام فرشتوں اور تمام مخلوقات کی۔ اﷲ تعالیٰ ہمیں عمل کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین۔

Views All Time
Views All Time
304
Views Today
Views Today
1
یہ بھی پڑھئے:   الیاس گھمن کی اہلیہ کے خط کا متن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: