تیری میری ایسی دوستی

Print Friendly, PDF & Email

فیس بک سے شروع ہونے والی دوستی کی پہلی ملاقات پی.سی لاہور میں ہوئی جب قمر اور ذیشان مجھ سےملنے آئے اور ہم نے اکٹھے لڑکے اور لڑکیاں تاڑیں.بہت سی باتیں کی۔ جن کا کوئی سر پیر نہیں تھا اور یاد میں ایکخوش گوار ملاقات باقی رہ گئی.کچھ ہی دنوں کے بعد قمر نے قلم کار کے بارے میں سوچنا شروع کیا تو شائد میں اس سوچ میں شامل ہونے والی پہلی عورت تھی.قمر، عامر رہداری اوررضوان گورمانی نے مل کر اس خواب کو پایہ تکمیل تک پہنچایا .

جب قمر کے گھر والے اس کے لئے رشتہ تلاش کر رہے تھے اور قمر عباس کنوارا مشہور تھا تب یہ قلم کار کے لئے لکھی گئی میری تحریر کی غلطیوں پر نالاں رہتا تھا .اکثر فون کرکے کہا کرتا کہ اتنے ٹوٹل الفاظ نہیں ہوتے جتنی زری کی غلطیاں ہوتی ہیں.یعنی میں کہہ سکتی ہوں کہ میری غلطیاں نظر انداز کرنے میں قمر کا ہاتھ ہے،میں ہمیشہ شکر گزار رہوں گی.

مجھے قلم کار سے ایسی ہی محبت ہے جیسے اپنے گھر اور بچوں سے ہوتی ہے.جب جب کسی اور ویب سائٹ پہ لکھنے کی آفر آئی تو سلیقے سے انکار کیا کہ نہیں قلم کار کے ہوتے کہیں نہیں جا سکتی۔ کتنی خوبصوت کہکشآں ہے قلم کار کی اور اس کا سب سے روشن ستارہ سید مرشد پاک ہیں گو کہ میری بالمشافہ ملاقات نہیں ہوئی ،اب تک پر فیس بک پر روزانہ ملتی ہوں .ان کا صبح بخیر کا میسج پڑھ کر صبح ہوتی ہے .کیا ہی کمال لکھتے ہیں ہر موضوع پر بھر پور گرفت ہوتی ہے اور اتنے.منجھے ہوئے صحافی اور خوبصورت انسان کا ساتھ قلم کار کی خوب صورتی میں اضافہ.کرتا ہے۔جیتے رہیئے مرشد پاک.

قلم کار کی کامیابی کا راز بھی یہی ہے کہ اس کی تحریریں مذہبی تعصب سے پاک اور معتدل ہوتی ہیں .یہاں لکھنے والے ایک دوسرے کا بے حد احترام کرتے ہیں.قلم کار کی کامیابی کے خواب دیکھنے والوں اور اس کی آبیاری کرنے والوں میں شامل ہوں اس لئے اس کی کامیابی سرشار کرتی ہے.
میرا قلم کار دو سال کا ہوگیا ہے.دوسال.کا بچہ چلنا سیکھتا ہے قلم کار نے دوڑنا بھی سیکھ لیا ہے اور بہت سوں کی دوڑیں لگواتا بھی ہے. دعا ہے کہ.میرے قلم کار پر لکھنے والے تمام قلم کار سلامت رہیں اور قلم کار کی ویب سائٹ سدا لکھاریوں کو یوں ہی احترام سے نوازے آمین.

Views All Time
Views All Time
294
Views Today
Views Today
1
mm

ڈاکٹر زری اشرف

ڈاکٹر زری اشرف ایک ڈاکٹر ہونے کے ساتھ ساتھ سوشل ورکر بھی ہیں۔ اور اس کے علاوہ مطالعہ کی بیحد شوقین۔ قلم کار کے شروع ہونے پر مطالعہ کے ساتھ ساتھ لکھنا بھی شروع کر دیا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: