وحشتوں کے بے نتھے بیل کو برداشت کی لگام ڈالئے

Print Friendly, PDF & Email

سخت اذیت ہے کہ وہی گھوم پھر کر ہر دو چار دن کے بعد کسی المیے کی خبر آجاتی ہے اور خونِ جگر اک طرف پرانے زخموں سے کُھرنڈ اُتار کر رِستا ہے تو دوسری جانب آنکھوں سے رواں ہو جاتا ہے۔ کیا بھلے دن تھے کہ جب "صبح خیزی” طلوعِ فجر کی اذاں تھی اور کیا برا وقت ہے کہ جب "سنسنی خیزی” رتجگوں کی لوری ہوِئی۔ ہم آپ لاکھ برا چاہیں کوئی نہ کوئی بری خبر ہمارا جی مکدّر کر ہی دے گی اور ہم جھنجھلائے جھنجھلائے پھریں گے۔ طبیعت کی جھنجھلاہٹ میں بھی عجیب مقناطیسی قوت ہوتی ہے۔ آس پاس موجود کسی دوسرے سے کوئی غلطی سرزد ہو جائے تو اس کا سارا اثر بھی کھٹ سے آجُڑتا ہے۔ ایک چھوٹی سی بات سے شروع ہوئی تکرار بڑھتے بڑھتے بسا اوقات ہاتھا پائی تک بھی جا پہنچتی ہے۔ جس کا نتیجہ کبھی بد مزگی تو کبھی المیے کی صورت نکلتا ہے۔

عدم برداشت نے ہمارے حوصلہ افزاء رویوں کی بدولت دیو مالائی کہانیوں کے اس ہٹّے کٹّے عفریت کا روپ دھار لیا ہے جس کی دہشت سے بستی کے لوگ اس حد تک مغلوب ہوتے ہیں کہ اس کے پیٹ اور غیض کی آگ ٹھنڈی کرنے کو خود ہی کوئی کمزور اور ناتواں شکار ڈھونڈ کر اس کے قدموں میں بلی چڑھا دیا کرتے تھے۔ ذرا غور کریں تو آج بھی یہی ہو رہا ہے۔ ادھر ہم برداشت کے ہاتھوں شکست کھاتے ہیں ،ادھر اس کی جیت کا خراج اپنے اردگرد موجود لوگوں کا ناطقہ بند کر کے لیتے ہیں۔ معاشرہ ایسا شُتر بے مُہار موبائل مکتب بن چکا ہے کہ جسے دیکھو وہ دوسرے کو سبق سکھانے کو پھرتا ہے اور حد تو یہ ہے کہ راستہ چیرتی یہ موبائل ہٹو بچو کے سائرن کی بجائے اپنی زد میں آنے والوں کی چیخوں اور کراہوں کی پھیلائی دہشت کے دم پر ساری اخلاقیات روندتی چلی جا رہی ہے۔

Views All Time
Views All Time
404
Views Today
Views Today
2
یہ بھی پڑھئے:   عنیزہ سید

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: