خواب کراچی اور بارش | فہمیدہ یوسفی

Print Friendly, PDF & Email

دیر تک بیٹھے ہوئے دونوں نے بارش دیکھی
وہ دکھاتی تھی مجھے بجلی کے تاروں پہ لٹکتی ہوئی بوندیں
جو تعاقب میں تھیں اِک دوسرے کے
اور اِک دوسرے کو چھوتے ہی تاروں سے ٹپک جاتی تھیں
مجھ کو یہ فکر کہ بجلی کا کرنٹ
چھو گیا ننگی کسی تار سے تو آگ کے لگ جانے کا باعث ہو گا
اس نے کاغذ کی کئی کشتیاں پانی پر اُتاریں
اور یہ کہہ کے بہادیں کہ سمندر میں ملیں گے
مجھ کو یہ فکر کہ اس بار بھی سیلاب کا پانی
کود کے اُترے گا کہسار سے جب
توڑ کے لے جائے گا یہ کچے کنارے
اوک میں بھر کے وہ برسات کا پانی
اَدھ بھری جھیلوں کو ترساتی رہی
اور بہت چھوٹی تھی، کمسن تھی، وہ معصوم بہت تھی
آبشاروں کے ترنم پہ قدم رکھتی تھی اور گونجتی تھی
اور میں عمر کے افکار میں گم
تجربے ہمراہ لئے
ساتھ ہی ساتھ میں بہتا ہوا، چلتا ہوا، بہتا گیا
گلزار
کہتے ہیں کہ خواب دیکھنا چاہیے کیونکہ خواب دیکھنے والوں کو تعبیر ملتی ہے یہ الگ بات ہے کہ خوابوں کا تعلق بھی کچھ حقیقی دنیا کہ ساتھ ہونا چاہیے ورنہ فہد مصطفی کے پروگرام میں جاکرآٹھ دس کلو سونا یا گاڑی جیتنے کا خواب تو رمضان میں کراچی میں موجود امت مسلمہ کو تو تواتر سے نظر آتا ہوگا ( ویسے اس خواب کا صرف رمضان اور امت مسلمہ سے تعلق نہیں ہے خواب ہے سب دیکھ سکتے ہیں ) خیر سیانے تو یہ بھی کہتے ہیں کہ اپنے خواب ہر کسی کونہیں بتانا چاہیے ورنہ خواب کی تعبیر الٹی ہوجاتی ہے پورا ہونا تو دور کی بات ہے شاید اسی لیے ستر سال سے پاکستان کے لیڈر پاکستان کے لیے خواب دیکھ رہے ہیں اور اللہ کے فضل سے اپنے ہر جلسے کے خطاب میں خواب کی تکمیل کا زور و شور سے تذکرہ کرتے ہیں اسی لیے تو پاکستان دن رات ترقی کے مدارج طے کررہا ہے ہر طرف انصاف اور عدل کا بول بالا ہے امن ہے دہشت گردی کا تو دور دور تک نام نہیں تعلیم اور روزگار کے بہترین مواقع سکون ہی سکون ہر شہری خوش خواب ہے نا اب کیا اس پر بھی جے آئی ٹی بنے گی یا عدلیہ کا بنچ بیٹھے گا ایسے ہی سوتے جاگتے ایک خواب کراچی کا بھی نظر آ گیا کیو ں کہ جاگتے ہو ئے تو ہر صاحب نظر کو کراچی کا دکھ نظر آتا ہے سمندر کنارے پیاسا کراچی لہو لہو کرچی کرچی کراچی ہر طرف کچرا کچرا کراچی اپنوں کے ستم اور غیروں کی کرم فرمائیوں کا مشق ستم کراچی اپنی شنا خت کو ڈھونڈتا کراچی وفاق اور صوبائی حکومت کے درمیان مفاد کی جنگ کا شکار کراچی سب کو سمیٹتا خود بکھرتا کراچی چلو اب کچھ خواب کی بات کرلیتے ہیں گرمی کی جھلستی ہوئی تپش اور حبس سے بے حال لوگوں کے لئے اچانک ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا چل پڑنے پر سکھ کا سانس لیتے ہیں نم آلود موسم طبیعت پر خوشگوار اثرات مرتب کرتی ہے ہلکی تیز بارشوں میں بھیگتے ہوئے بچے بڑے سب کو یہ برستی بوندیں اچھی لگتی ہیں مگر اگر آپ کراچی کے رہائشی ہیں تو پہلے تو جیسے کراچی کے حالات اور سندھ گورنمنٹ کے ترقیاتی کاموں پر یقین کرنا ذرا مشکل ہے ویسے ہی کراچی کے موسم پرکوئی حتمی رائے نہیں دی جاسکتی بھلے محکمہ موسمیات کس قدر پرجوش انداز میں بتادے کہ کراچی میں بھی طوفانی بارش ہوگی اور کراچی کی ترسی عوام بھی بارش کے انتظار میں تڑپ کر رہ جاتی ہے مگر کراچی میں بوند بھی نہیں ٹپکتی اور بے چارے کراچی والے رات پڑی اوسوں کی پکچرز لے کر ہی سوشل میڈیا پر پوسٹ کردیتے ہیں آخر مقابلے پر لاہوری اور اسلا م آباد والے ہوتے ہیں جہاں تو ذرا گرمی ہوئی اور برکھا برسی بہر حال اگر کراچی میں موسم مہربان ہوجا ئے اور بادل برسے تو کراچی والوں کو خوشی کم اذیت زیادہ ہوتی ہے دو بوندیں پڑتے ہی کے الیکٹرک کی قابلیت سامنے آجاتی ہے اور کراچی اندھیروں میں ڈوب جاتا ہے اگر اتنے بڑے شہر میں ستر فیصد علاقوں میں بجلی بند ہوجائے تو کیا ہوا آخر فیڈر ٹرپ ہوئے ہیں فالٹ ہیں ٹھیک ہو جاتے ہیں ہر طرف نالے جو کہ کچرے سے بھرے ہوئے ہیں ابل جاتے ہیں اور شہری اور صوبائی حکومتوں کی نا اہلی کا منہ چڑاتے ہیں اور ان کے پاس تو وہی رٹاے رٹائے سبق ہیں کہ اختیارت نہیں تھے ان کی ذمہ داری ہے اس کی ذمہ داری ہے زیادہ ہوگا تو ایک عدد باقی رہی سہی کسر شہر میں جاری ترقیاتی کاموں نے پوری کردی ہے شہر بھر میں بدتریں ٹریفک جام ہوجاتا ہے کون سی سڑک پر جائیں کون سی پر نہ جائیں ہر سڑک کا اپنا ہی نوحہ ہے کراچی والوں کے لیے موسم کی خوب صورتی سے لطف اٹھانا بھی جان جوکھم کا کام ہے مگر اس شہر کے رہنے والے اتنے ستم سہہ چکے ہیں کہ ان کو فرق نہیں پڑتا کہ بجلی پانی گیس ٹریفک جام تو زندگی کا حصہ ہیں ان کے بغیر بھی کیا زندگی تو کراچی والے بھی اپنے لئے کوئی نہ کوئی تفریح ڈھونڈ لیتے ہیں یہ الگ بات ہے کہ وہ تفریح کرنٹ کھا کر مرنے میں نالوں میں ڈوبنے اور گھڑوں میں گندے پانی آجانے کی صورت میں ملتی ہے کیا کبھی کراچی میں بھی ایسی کوئی بارش برس سکتی ہے جو آپس میں دلوں کے میل دھو ڈالے جب ہلکی ہلکی سے پھوار پڑے تو دل اس خوف سے بندنہ ہوجائے کی گھنٹوں کی مسافت طے کرنا پڑے گی ٹریفک رواں رہے گا گٹر ابلنے سے پہلے صاف ہوں گے شہری اور صوبائی انتظامیہ اپنے معاملات حل کرنے کی اہل ہوگی کے الیکٹرک کے دل میں بغیر جلاؤ گھیراؤ کے اللہ کا خوف جاگ جائے کراچی کے نلوں میں گندا نہیں صاف پانی آئے گا ہر سڑک کے اطراف میں درخت ہوں گے کراچی بھی روشن روشن ہرا ہرا ہوگا سمندر کنار ے صاف ستھرا نکھرا نکھرا ہو کراچی اے کاش کراچی شہر میں بھی اترے کمال کا موسم خواب ہے نا اور خواب دیکھنے پر تو کوئی پابندی تونہیں ہے نا خواب تو خواب ہوتے ہیں ان پر کیا پابندی ۔

Views All Time
Views All Time
637
Views Today
Views Today
1
یہ بھی پڑھئے:   امریکا کی جھنجلاہٹ (1) - اکرم شیخ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: