Skip to Content

Qalamkar | قلم کار

جہالت، ظلم اور ناانصافی کے خلاف برسرپیکار

کیا عید صرف بچوں کی ہوتی ہے؟

by ستمبر 13, 2016 بلاگ
کیا عید صرف بچوں کی ہوتی ہے؟
Print Friendly, PDF & Email

rp_ali-zamin-300x246.jpgآپ تمام احباب کو میری طرف سے عید کی خوشیاں بہت مبارک ہوں۔
عید نام ہے خوشی کا اور حقیقی خوشی خوشیاں اور آسانیاں بانٹ کے ہی ملتی ہے۔ اپنے اعزا و اقارب کو آج کے دن یاد کیجیے مل سکتے ہیں تو ملیے، نہیں تو کال کیجیے۔ بات کیجیے اپنا وقت دیجیے۔
آپ کے ارد گرد وہ رشتے دار، ہمسائے ،جان پہچان والے جو آج کسی وجہ سے دکھی ہیں۔ محروم ہیں جن کے پیارے اس دنیا سے چلے گئے ،وہ جن کے پیاروں کو ان دہشت گرد یزیدی طالبان قوتوں نے مار ڈالا ان کے گھر جائیے اور اپنائیت کا اظہار کیجیے۔ دیکھیے کسی کا دکھ درد آپ کیسے بانٹ سکتے ہیں۔ کیونکہ آج جس مقام پر وہ ہیں اس پر کوئی اور بھی ہو سکتا تھا۔
خوشیاں بانٹیں گے تو عید کی سچی خوشی پائیں گے اور پھر آپ یہ نہیں کہیں گے کہ عید تو بچوں کی ہوتی ہے  بڑوں کی کیا۔ ہم تو عید سو کر گزارتے ہیں کیونکہ بڑوں کیلیے عید پر اور کیا کام ہوتا ہے۔ جناب عید بڑوں کی ہوتی ہے لیکن جب آپ وہ سب کریں گے جو بڑے کو کرنا چاہیے تو معلوم ہو گا عید بڑے کیلیے ہی ہوتی ہے۔
نہ جانے کیوں آج کے دن مجھے خرم زکی، ناصر عبّاس، سبین محمود، امجد صابری، مولانا نعیمی، مولانا حسن جان، مولانا حسن ترابی، سبطِ جعفر، اعتزاز حسن، کیپٹن یاس عبّاس، ڈاکٹر شبیہ الحسن اور ایسے دیگر بہت سے ہزاروں وہ بے گناہ لوگ یاد آ رہے ہیں جنہوں نے اس وطن کیلیے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کر دیا۔نا جانے کیوں مجھے ایسا لگتا ہے جیسے وہ اس قوم کی طرف منہ کیے دیکھتے ہونگے کہ جن کیلیے جن کی اولاد اور مستقبل کیلیے میں نے اپنے مستقبل کو اپنی اولاد کی خوشیاں قربان کر دیں کیا ان میں سے کوئی آج میرے اہل و عیال کو اپنی خوشیوں میں یاد رکھ رہا ہے یا نہیں۔
بہت دکھ ہوتا ہے یہ سوچ کہ کہ ان میں سے اکثر دکھی ہوتے ہونگے اس قوم کی بے اعتنائی کو دیکھ کے۔
تو کیا جو زوال ہم پر آیا کیا ہم اسی قابل نہیں ہیں؟
عیدِ الاضحیٰ قربانی کا دن ہے مگر بکرا ذبح کروا کر پورے کا پورا فریز کر لینا اور گائے کے گوشت کا حصہ غریبوں اور اعزا و اقرباء کو بانٹنا قربانی نہیں کہلاتی۔ اگر ہم پورا سال کھاتے ہیں تو آج کا دن ان کا ہے جن کو پورے سال آج کے دن کا انتظار ہوتا ہے کہ ان کے ہاں بھی گوشت بنے گا۔
آج کا دن ابراہیم و اسماعیل علیہم السلام کی قربانی کو یاد کرنے کا دن ہے اور ساتھ میں نواسہِ رسول ﷺ کی اس قربانی کو جسے خدا نے ذبح عظیم قرار دیا۔ خدا ہمیں ان عظیم قربانیوں سے قربانی کا مقصد اور اس کے ذریعہ رضاِ پروردگار حاصل کرنے کی توفیق فرمائے۔
آپ تمام احباب کو عید مبارک اور ساتھ میں دعا کہ خدا ہمیں عیدین کی حقیقی خوشیاں منانا اور تقسیم کرنا نصیب فرمائے۔

Views All Time
Views All Time
663
Views Today
Views Today
1
یہ بھی پڑھئے:   تعلیم
Previous
Next

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

%d bloggers like this: