Skip to Content

Qalamkar | قلم کار

جہالت، ظلم اور ناانصافی کے خلاف برسرپیکار

حَیَّ عَلَی الفَلَاح

by اگست 15, 2016 بلاگ
حَیَّ عَلَی الفَلَاح
Print Friendly, PDF & Email

mahjabeen asifحَیَّ عَلَی الفَلَاح ۔ شب زادو !!!,,,,,,.……. ،کیا خبر ہے بے عملی کے بے فیض موسم کیسے زمینوں کو بے ثمر ،دعاؤں کو بے اثر ،نالوں کو نارسا ،فیصلوں کو جامد ،لفظوں کو بے توقیر ،صدا کو بے صوت کردیتے ہیں ۔یہ جو آنگن لہو کی بارشوں سے گلرنگ ہیں یہ کن ہاتھوں کے بے مہر فیصلے ہیں جن سے دھرتی تھر تھر کانپ رہی ہے ۔وہ شاخ زیتون جو ،والتین ،والزیتون ، کی صورت تمہارے ہاتھوں میں سجتی تھی ۔۔وہ لب جو تشنہ تھے ۔۔آنکھیں بے بصر ،گویائی تکلم کھوچکی تھی ۔۔زنجیر پا بے دست و پا کر چکی تھی ۔گھور اندھیرے روشن فکر کو نگل چکے تھے ۔۔اس رات خود دعا مرقوم ہوئی تھی ۔۔رب کے علین میں جو محفوظ تھی وہی دست پاک کے نقشے پر مرکوز ہوئی ۔۔مقسوم ہوئی ۔۔۔کیا یہ اس مبارک رات کی مہرباں ساعتیں نہ تھیں ۔کیا کوئی کشف ۔۔کوئی معجزہ اب بھی درکار ہے ؟سوچوں کے اس سم سم کو کھولنے،صیقل کرنے کے لیے ۔۔۔بجلی کی تیز کڑاکے دار آواز ۔۔روشنی کے تیز جھماکےنے آنکھیں چندھیا دیں ،اک شفیق سایہ سرگوشی کر رہا تھا ۔۔۔۔واقعی یہ میری چشم بینا ۔۔۔کے لیے اشارہ خاص تھا ۔۔۔۔یہ مرا خطہ 27ویں شب خیر کی نوید ۔۔قرآن کی نزولی ساعتوں میں ودیعت کیا گیا ۔۔انا انزلنہ فی لیلۃالقدر ۔۔۔۔کے لفظ نم ہوگئے ۔یا اللہ ہم اس روشن دلیل کے ساتھ بھی بدگمان ہیں ۔۔۔۔لیلۃ القدر ۔۔رمضان ۔۔نزول قرآن ۔۔خواب کی سر گوشیاں ۔۔نور علیٰ نور ۔۔۔۔،تو اے جن و انس تم اپنے رب کی کون کونسی نشانیوں کے منکر ہوگے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کا چہرہ آنسووں سے بھیگا ہوا تھا ہچکیوں سے کمرہ گونج رہا تھا ۔۔اک سایہ سا لہرایا ۔۔۔سلام حی حتی مطلع الفجر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔واقعی فجر کی اذاں فضا کا سکوت توڑ رہی تھی ساتھ ہی منجمد دل کی برف پگھلتی گئی ۔۔۔۔۔۔۔

Views All Time
Views All Time
420
Views Today
Views Today
1
یہ بھی پڑھئے:   تحفہ | شاہانہ جاوید
Previous
Next

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

%d bloggers like this: