Skip to Content

Qalamkar | قلم کار

جہالت، ظلم اور ناانصافی کے خلاف برسرپیکار

سی پیک سے وابستہ پاکستان کا روشن مستقبل | عابد ایوب اعوان

by مئی 16, 2017 کالم
سی پیک سے وابستہ پاکستان کا روشن مستقبل | عابد ایوب اعوان

چین کے دارالحکومت بیجنگ میں ون بیلٹ ون روڈ (اوبور) فورم میں دنیا بھر سے 29 ممالک کے سربراہان مملکت اور 130 ریاستوں کے 1500 سے زائد مندوبین کی شرکت نے اس اجلاس کی غیر معمولی اور تاریخی اہمیت کو پوری دنیا پر واضح کر دیا ہے۔ اوبور کے اس اجلاس میں جہاں ایک طرف چینی صدر شی جن پنگ میزبانی کر رہے تھے تو وہیں اس اجلاس میں پاکستانی وزیر اعظم نواز شریف ، روسی صدر پیوٹن، ترک صدر اردوان اور اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتو نیو گوئتریس کی شرکت نے اس اجلاس کو غیر معمولی اہمیت کا حامل بنا دیا۔ برطانیہ کے وزیر خزانہ فلپ ہیمنڈ کا اجلاس میں یہ کہنا کہ شاہراہ ریشم منصوبے میں ہم فطری شراکت دار ہیں یہ ظاہر کرتا ہے کہ برطانیہ اس منصوبے میں کتنی دلچسپی رکھتا ہے۔ امریکہ ، آسٹریلیا اور وینزویلا بھی اس منصوبے کے بھر پور حامی ہیں۔ مودی سرکار نے اوبور فورم کا بائیکاٹ کر کے پاکستان کو تنہا کرنے کے خواب میں مبتلا ہندوستان کو ہی خطے میں الگ تھلگ کر دیا۔ اوبور فورم اجلاس میں چین کی طرف سے نئے سلک روڈ منصوبے کے لئے 130 کھرب روپے کا اعلان کیا گیا۔ اس منصوبے سے ایشیا ، یورپ اور افریقہ کے درمیان اربوں ڈالر کے بنیادی ڈھانچے کی تعمیر سے رابطوں کو فروغ ملے گا۔ بیلٹ اینڈ روڈ منصوبہ 21ویں صدی کا ایک عظیم منصوبہ ہے۔ اس منصوبے کے تحت قدیم سلک روٹ یا شاہراہ ریشم کو دوبارہ قائم کرنا شامل ہے۔ اور اس کے لیئے بندرگاہوں ، شاہراہوں اور ریل کے راستوں کے بنانے میں سرمایہ کاری کی جائے گی تاکہ چین کو ایشیا ، یورپ اور افریقہ سے جوڑا جا سکے۔ 100 سے زائد ممالک اور بین الاقوامی ادارے اس منصوبے کی حمایت کر چکے ہیں۔ 40 سے زائد ممالک اور بین الاقوامی اداروں سے معاہدے ہو چکے ہیں۔ مالیاتی رابطہ سازی کو فروغ دینے کے لئے چین متعدد ممالک اور اداروں کے ساتھ تعاون کررہا ہے۔ ایشین انفراسٹرکچر انویسٹمنٹ بینک نے بیلٹ اینڈ روڈ کے 9 منصوبوں کے لیئے ایک ارب 70 کروڑ ڈالرز فراہم کر دیئے ہیں۔ شاہراہ ریشم فنڈ کی جانب سے بھی 4 ارب ڈالرز کی سرمایہ کاری کی جارہی ہے۔ یہ منصوبہ امن،خوشحالی کی نئی راہیں دریافت کرنے اور مختلف تہذیبوں کی رابطہ سازی میں معاون ہوگا۔
چین پاکستان اقتصادی راہداری کا ماسٹر پلان پہلی بار منظر عام پر آچکا ہے۔
پاکستان کتنا بدلنے جا رہا ہے ؟گوادر سے خنجراب تک کی کہانی کیا ہے ؟
وزیر اعظم پاکستان چین کے دورے پر ہیں جہاں وہ سی پیک کے لئے طویل المدتی پروگرام پر عمل در آمد کا جائزہ لے رہے ہیں ۔جس کا تعلق دونوں اطراف کی حکومتوں سے ہے جسے چین کے ڈویلپمنٹ بنک اور چین کے نیشنل ریفارم کمیشن نے ترتیب دیا ہےجو کہ231 صفحات پر مشتمل ہے ۔
یہ پروگرام انگریزی روزنامہ ڈان نے اپنی ویب سائٹ پر پہلی بار جاری کیا ہے ۔ پروگرام کے ذریعے اس منصوبے میں چین کی ترجیحات کو سمجھنے میں مدد ملتی ہے کہ چین یہاں پر اگلے پندرہ سالوں میں کیا کرنا چاہ رہاہے ۔اس سے پہلے یہ معلومات عام نہیں کی گئی تھیں ۔منصوبے میں کہا گیا ہے کہ چین کا صوبہ سنکیانگ اور یغر کا علاقہ اور تمام پاکستان اس منصوبے کا حصہ ہے ۔ اس کی مزید تقسیم منصوبے کے مرکزی حصے کے طور پر کی گئی ہے جہاں پر سب سے زیادہ توجہ ہو گی جن میں چین کے علاقے کاشغر ، تمشاق، اتوشی ،اکتو اور پاکستان کے علاقوں میں اسلام آباد ، پنجاب ، سندھ ، بلوچستان ، خیبر پختونخواہ ، اور گلگت بلتستان شامل ہوں گے ۔اس کے "ون بیلٹ ، تین راستے اور پانچ فنکشنل زون ہوں گے "۔جہاں سے تمام سامان کی رسد ہو گی ۔
مثال کے طور پر چینی کمپنیوں کو ہزاروں ایکڑ زمین لیز پر دی جائے گی جس میں وہ جدید ٹیکنالوجی کے ذریعے کاشتکاری کریں گے پشاور سے کراچی تک تمام شہروں کی نگرانی کا بھر پور نظام وضع کیا جائے گا۔جہاں پر تمام اہم جگہوں کی چوبیس گھنٹے وڈیو ریکارڈنگ کی جائے گی ۔ملک میں فائیبر آپٹک بچھائی جائے گی جو صرف انٹر نیٹ کے لئے نہیں بلکہ اس کے ذریعے ٹیلی ویژن کی نشریات بھی دکھائی جائیں گی جس میں چینی ثقافت سے روشناس کرانے کے لئے چینی میڈیا کے چینل اور ریڈیو بھی شامل ہوں گے ۔جس سے نہ صرف چینی معیشت بلکہ چینی اور پاکستانی ثقافتوں کو بھی ایک دوسرے کو سمجھنے میں مدد ملے گی اور پاکستان میں غیر ملکی سرمایہ کاری کا ایک وسیع ماحول پیدا ہو گا ۔پاکستان میں پہلے ہی کئی چینی کمپنیاں کام کر رہی ہیں مثال کے طور پر گھریلو اشیا بنانے والی کمپنی ہائیر ، چائینا موبائل ، ہواوے ٹیکنالوجی اور معدنیات کے شعبے میں چائینا میٹا لرجیکل کارپوریشن شامل ہیں ۔
اس کے ساتھ ہی ٹیکسٹائل ، گارمنٹس ، سیمنٹ ،عمارتوں کا سامان ، کھاداور زرعی ساز و سامان بھی بنایا جائے گا ۔اس مقصد کے لئے انڈسٹریل پارک اور سپیشل اکنامک زون بنائے جائیں گے ۔جہاں پر پانی ،بجلی اور دیگر مطلوبہ سہولیات موجود ہوں گی ۔
لیکن منصوبے کا سب سے اہم حصہ زراعت کا ہے حالانکہ سی پیک کا تصور ایک بھر پور صنعتی اور ٹرانسپورٹ کے ڈھانچے کا ہے جس میں پاور پلانٹس اور ہائی ویز بننے ہیں مگر ،منصوبے میں زراعت سے متعلق بہت سے منصوبے بھی شامل ہیں ۔
زراعت :
اس شعبے میں ایک سرے سے دوسرے سرے تک ایک سپلائی چین ہے ۔جس میں بیچ، کھادوں ،اور ادویات کی فراہمی کے لئے قرضہ جات بھی دیئے جائیں گے ۔چینی کاشت کار اپنے فارم بنائیں گے جس میں فروٹس اور سبزیاں اگائی جائیں گی ۔جن کو مارکیٹوں تک پہنچانے کے لئے ایک پورا نظام وضع کیا جائے گا۔
زراعت کے شعبے میں ہزاروں کی تعداد میں چینی باشندے آئیں گے ۔ جس سے ترقی کے نئے دروازے کھلیں گے کیونکہ پاکستان میں آدھی پیداوار ترسیل کی سہولتیں نہ ہونے کی وجہ سے ضائع ہو جاتی ہے ۔ زرعی کمپنیوں کو چین کی حکومت مالی مدد دے گی اور اس مقصد کے لئے مختلف وزارتیں اور چین کا ترقیاتی بنک بلا سود قرضے فراہم کرے گا ۔ چین اور پاکستان کے زرعی حکام ایک دوسرے سے باہم رابطوں میں رہیں گے ۔ چین کی حکومت غیر ملکی سرمایہ کاروں کو رعایتی نرخوں پر قرضے دے گی ۔جنہیں بعد ازاں شراکتی منصوبوں کی شکل بھی دی جا سکے گی ۔ اس منصوبے کے تحت چین کے صوبےسن کیانگ میں لائیو اسٹاک ، آبیاری اور بیجوں کی ورائٹی کے حوالے سے تجربات سے پاکستان کو مستفید کیا جائے گا۔ اس سے کاشغر صوبہ جہاں غربت زیادہ ہے وہاں روزگار کے مواقع بڑھیں گے ۔ یہ صوبہ زرعی ہے جہاں جنگلات ، مال مویشی ،مچھلی کے کاروبار کی مالیت سالانہ پانچ ارب ڈالر تک ہے اور اس کی آبادی صرف چالیس لاکھ ہےجس کے لئے مواقع بڑھ جائیں گے ۔
تاہم چینیوں کے لئے پاکستان کی زرعی مارکیٹ میں سرمایہ کاری کا مقصد زرعی اشیا کی برامدات بڑھانا اور اور کاشغر کے علاقےکوترقی دینا ہے ۔ اس مقصد کے لئے سترہ مختلف منصوبوں کی نشان دہی کی گئی ہے ۔ جن میں این پی کے فرٹلائزر پلانٹ لگانا جس کی پیداواری صلاحیت آٹھ لاکھ ٹن ہو گی ۔ اسی طرح کمپنیوں کو فارمز کے لئے ٹریکٹر ز، اجناس کومحفوظ بنانے کی مشینری ،انرجی سیونگ پمپس، کھادوں اور بیج بونے اور فصل کاٹنے کے آلات خریدنے کے لئے قرضے دیئے جائیں گے۔
سکھر میں گوشت کی پراسیسنگ کا ایک پلانٹ لگایا جائے گا جس کی سالانہ پیداواری صلاحیت دولاکھ ٹن ہو گی ۔اسی طرح دودھ کے پراسیسنگ پلانٹ بھی لگائے جائیں گے جن کی پیداواری صلاحیت دو دو لاکھ ٹن ہو گی ۔جدید زرعی فارم جو زیادہ تر پنجاب میں ہوں گے ساڑھے چھ ہزار ایکڑ پرقائم کئے جائیں گے ۔ پاکستان کے تمام بڑے شہروں کو ایک دوسرے سے منسلک کیا جائے گا تاکہ مصنوعات کی ترسیل میں آسانی ہو یہاں ویئر ہاؤس بھی تعمیر ہوں گے ۔ جہاں پر فروٹ ، سبزیاں اور اجناس رکھی جائیں گی ۔ پہلے مرحلے میں اس قسم کے ویئر ہاؤس اسلام آباد اور گوادر میں تعمیر کئے جائیں گے ۔ اس کے بعد2026-2030 کے درمیان کراچی ، لاہور اور پشاور میں بھی بنائےجائیں گے ۔
اسلام آباد ، لاہور اور گوادر میں سبزیوں کے پراسیسنگ پلانٹ لگائے جائیں گے جن کی سالانہ صلاحیت دو ہزار ٹن ہو گی ۔ دس ہزار ٹن کے فروٹ جوس اور جام پلانٹ اور دس لاکھ ٹن صلاحیت کے گندم ، دالوں اور چاول کے پراسیسنگ پلانٹ لگائے جائیں گے ۔ شروع میں ایک لاکھ سالانہ پیداواری صلاحیت کا کاٹن پراسیسنگ پلانٹ بھی لگایا جائے گا۔
چین زرعی ٹیکنالوجی کے ثمرات پاکستانیوں کو منتقل کرے گا اور اس مقصد کے لئے چینی سرمایہ کاروں کو پاکستان میں زرعی شعبے میں لایا جائے گا جہاں وہ زراعت سے منسلک اپنی ٹیکنالوجی متعارف کراوائیں گے ،کھاد ، زرعی ادوایات کے کارخانے لگائیں گے ۔اس میں وہ اپنے پاکستانی شراکت داروں کے ساتھ مل کر بھی کام کریں گے ۔ پاکستانی زرعی مصنوعات کو دوسرے ممالک کی منڈیوں تک لانے کے لئے ایک میکنزم بنایا جائے گا ۔
چینی شہریوں کو پاکستان کے مذہب ، روایات اور مقامی افراد کی عزت و احترام کے حوالے سے بتایا جائے گا تاکہ وہ یہاں کےلوگوں کے ساتھ مساوی اور ہم آہنگی کے ساتھ رہ سکیں ۔انہیں مقامی افراد کوروزگار دینے اور مقامی لوگوں کے ساتھ شراکت کے ساتھ کام کرنے کے لئے کہا جائے گا ۔مزید کہا گیا ہے کہ چین کچھ ممالک کے ساتھ سیکورٹی امور پر مل کر کام کر رہا ہے تاکہ وہ وہاں اپنے شہریوں کی حفاظت کو یقینی بنائے ۔
صنعت:
صنعت کے حوالے سے ملک کو تین حصوں میں تقسیم کیا گیا ہے ۔مغربی ، شمال مغربی ،وسطی اور جنوبی ۔ہر زون میں مخصوص صنعتیں لگائی جائیں گی جن کے لئے صنعتی پارک بنائے جائیں گے جن میں سے کچھ کا ذکر ہے ۔مغربی اور شمالی زون میں جن میں زیادہ تر بلوچستان اور خیبر پختونخواہ کے حصےآتے ہیں وہاں زیادہ تر کان کنی سے متعلق منصوبے ہیں ۔جن میں سونے اور ہیروں کی کانیں بھی شامل ہیں جن میں بہت سا کام ہونے والا ہے ۔سب سے زیادہ کام ماربل میں ہے پہلے ہی چین پاکستانی ماربل کا سب سے بڑ اخریدار ہے جو سالانہ اسی ہزار ٹن ماربل پاکستان سے خریدتا ہے ۔منصوبے کے تحت شمال میں گلگت ،کوہستان اور جنوب میں خضدار میں ماربل اور گرینائٹ کے بار ہ پراسیسنگ پلانٹ لگائے جائیں گے ۔
وسطی علاقے کو ٹیکسٹائل، گھریلو اشیااور سیمنٹ کے لئے مخصوص کیا گیا ہے ۔سیمنٹ پلانٹس کے لئے چار جگہوں کی نشاندہی کی گئی ہے جن میں داؤد خیل ، خوشاب ، عیسی ٰ خیل اور میانوالی شامل ہیں ۔پاکستان میں فی الحال سیمنٹ کی پیداوار اس کی ضروریات سے اضافی ہے گویا مستقبل کی ضروریات کو مد نظر رکھ کر یہ منصوبہ بندی کی گئی ہے ۔جنوبی زون میں پیٹروکیمیکل ، لوہا ، سٹیل ،ہاربر انڈسٹری ،انجنئرنگ ، تجارت سامان کی ترسیل اور گاڑیاں بنانے کے کارخانے قائم کئے جائیں گے ۔یہاں چونکہ بندرگاہ ہو گی اس لئے اس قسم کی صنعتوں کے لئے موزوں جگہ ہے ۔گاڑیوں میں چین کی جانب سے ابھی تک پاکستان میں کوئی کارخانہ قائم نہیں کیا گیا اس کی وجہ جاپانی گاڑیوں کی مقبولیت ہے اور ٹیوٹا ، ہنڈا اور سوزوکی گاڑیوں کی ہی فراہمی ہو رہی ہے ۔گوادر بھی جنوبی زون میں آتا ہے جس سے بلوچستان اور افغانستان کو منسلک کیا جائے گا۔اس لئے یہاں پر بھاری صنعتیں لگائی جائیں گی ۔پہلے ہی کچھ چینی کمپنیاں یہاں سرمایہ کاری کر رہی ہیں ۔کیونکہ یہ مرکزی حیثیت اختیار کرنے والا ہے اس کی بے پناہ جغرافیائی اہمیت ہے مشرق وسطی ٰ سے تیل کی سستی ترسیل یہاں سے ہو گی ۔لوہا اور کوئلہ بھی جنوبی افریقہ اور نیوزی لینڈ سے یہاں آئے گا اور یہاں سے پراسیسنگ کے بعد مشرق وسطی ٰ اور جنوبی ایشیا کی باقی مارکیٹوں تک جائے گا ۔
منصو بےمیں ٹیکسٹائل انڈسٹری کو بھی اہمیت دی گئی ہے ۔سنکیانگ میں پہلے ہی ٹیسٹائل انڈسٹری اپنے عروج پر ہے ۔چین پاکستان سے خام مال خرید کر سنکیانگ میں قائم گارمنٹس انڈسٹری کو فراہم کرتا ہے تاکہ کاشغر میں لوگوں کو روزگار ملے ۔
فائبر آپٹکس اور نگرانی:
جب سی پیک پر مذاکرات شروع ہوئے تھے تب سے یہ چینی حکومت کی ترجیح میں شامل تھا کہ دونوں ممالک کے درمیان فائبر آپٹک بچھائی جائے ۔جب سی پیک کو 2013 میں دونوں ممالک کے درمیان ایک سڑک کے طور پر دیکھا جا رہا تھا اس وقت دونوں ممالک کے درمیان اس سلسلے میں ایک عرضداشت پر دستخط ہوئے تھے ۔لیکن اب ایک عام فائبر آپٹکس سے بھی بہت زیادہ آگے تک معاملات جا چکے ہیں ۔
پاکستان کے ساتھ چین کی فائبر آپٹک بچھانے کی کئی وجوہات ہیں ایک تو اس کی اپنی سب میرین کے لئے اسٹیشن اور انٹر نیشنل گیٹ وے بہت محدود ہیں اس لئے اس کی نگاہیں مستقبل میں انٹر نیٹ ٹریفک پر ہیں ۔بالخصوص مغربی صوبوں کے لئے اس کی اشد ضرورت ہے اسی طرح چائینا ٹیلی کام برائے افریقہ کو یورپ تک توسیع دی جارہی ہے ۔اس لئے اس میں کچھ سیکورٹی خطرات ہیں ۔پاکستان کے پاس اپنی انٹرنیٹ ٹریفک کے لئے چار سب میرین ہیں لیکن لینڈنگ کے لئے صرف ایک اسٹیشن ہے اس لئے اس میں بھی سیکورٹی رسک ہیں ۔اس لئے منصوبے کے تحت خنجراب سے اسلام آباد تک ایک تین سطحی کیبل بچھائی جائے گی ۔گوادر میں ایک سب میرین لینڈنگ اسٹیشن بنایا جائے گا جسے سکھر سے منسلک کیا جائے گا۔جہاں سے اسلام آباد اور پاکستان کے دیگر بڑے شہروں تک اسے وسعت دی جائے گی ۔اس کی بینڈوڈتھ بڑھنے سے ایچ ڈی ٹی وی ، ڈی ٹی ایم بی کی سہولیات میسر آئیں گی ۔یہ نہ صرف ٹیکنالوجی بلکہ ثقافتی پھیلاؤ کا بھی سبب بنے گا ۔چین اور پاکستان کو ثقافتی طور پر ایک دوسرے کے قریب آئیں گے دونوں ممالک کا میڈیا ایک دوسرے سے منسلک ہو جائے گا ۔اور دونوں ممالک کی دوستی کا رشتہ پائیدار ہو گا ۔مزید یہ کہ ا س کے ذریعے خنجراب کی سرحد کی مانیٹرنگ اور سیف سٹی منصوبے کی بھی نگرانی ممکن ہو سکے گی ۔سڑکوں اور بڑے شہروں میں بڑے بڑے اسکینر نصب کئے جائیں گے جن سے دھماکہ خیز مواد کی نشاندہی کی جا سکے گی ،چوبیس گھنٹوں کی وڈیو ریکارڈنگ کی جائے گی ۔نگرانی کے ذریعے خطرات کی نشاندہی کو کمانڈ سینٹر تک پہنچایا جائے گاجو اپنا رد عمل دے گا۔
پاکستان میں ایک پائیلٹ پراجیکٹ کے طور پر ایک سیف سٹی قائم کیا جائے گا بعد اس کو دیگر شہروں اسلام آباد ، لاہور ، کراچی اور ان شہروں تک پھیلایا جائے گا جہاں سیکورٹی خطرات ہوں گے ۔
سیاحت اور تفریح :
اس منصوبےکا ایک بہت اہم باب ساحلی پٹی پرسیاحت کے فروغ کے موضوع پرہے۔طویل ساحلی علاقے کو ایک مکمل تفریحی علاقے میں بدلنا ہے اور اس کے لئے پرآسائش کشتیوں کے لئے گودیوں کی تعمیر ،کروز کے لئے بندرگاہ،سٹی پارکس ،عوامی دلچسپی کے مقامات ، تھیٹرز، گالف کورسسز، ہوٹلز اورپانی کے کھیل شامل ہیں۔ یہ علاقہ کیٹی بندر سے جیوانی تک ہوگا جو کہ ایرانی سرحد سے پہلے آخری مسکن ہے۔ لیکن یہ سب کچھ کرنے کے لئے ابھی بہت سا کام کرنے کی ضرورت ہے۔
منصوبے کی تفصیلات حیران کر دینے والی ہیں ۔ مثال کے طور پر گوادر میں بین الاقوامی سطح کا کروز کلب بنایا جائے گا جہاں سمندروں کی سیاحت کے شوقین افراد کو ایسے پرائیویٹ کمرے ملیں گے جن میں رہنے پر انہیں گمان گزرے گا کہ وہ سمندر میں رہائش پزیر ہیں اس میں مزیدآگے چل کر کہا گیا ہے کہ اس میں اسلامی ثقافت، تاریخی ثقافت، لوک ثقافت اور آبی ثقافت تمام کو ضم کر دیا جائے گا۔ بظاہر یہاں پر بھی مزید کام کرنے کی ضرورت ہے۔
اورماڑاکے لئے ایک الگ منصوبہ دیا گیا ہے جس میں علاقائی ثقافت کو نئے رنگ ڈھنگ سے سامنے لایا جائے گا ۔کیٹی بندر کے لئے جنگلی حیات کے لئے جنگلی ماحول تجویز کیا گیاہے جس میں آبی حیات کے لئے اکیوریم اور جڑی بوٹیوں اور درختوں کے باغات بنائے جائیں گے ۔کراچی کے مشرق میں سومیانی کی جانب بیچ ہوں گے جن کے ساتھ بنگلے ،کار کیمپ،گرم غسل خانے ،بیچ پر کھیل کود اور کھانے پینے کے مقامات وغیرہ شامل ہوں گے ۔
یہ سب کچھ ممکن بنانے کے لئے کروڑوں روپے درکار ہوں گے ۔
چین سے ویزا فری سیاحوں کی آمد اور ان کے لئے پاکستان میں سہولیات کا قیام ،لیکن یہاں یہ ذکر نہیں کیا گیا کہ پاکستانی سیاحوں کو چین میں کیا سہولیات ملیں گی ۔
نقصان کا خدشہ :
کسی بھی منصوبے میں سب سے اہم سوال اس کے لئے وسائل کی فراہمی کا ہوتا ہے ۔ طویل مدتی منصوبہ جو کہ چینی بنک نے ترتیب دیا ہے بڑی عجلت میں معلوم ہوتا ہے کیونکہ ا س کے ساتھ پاکستان کا معاشی نظام ،حکومتی خسارہ ، کمرشل بنکوں کی حالت اور مجموعی طور پر پاکستان کی معاشی حالت مطابقت نہیں کھاتی ۔ جب آپ پاکستان میں سرمایہ کاری کی مجموعی حالت کو دیکھتے ہیں تو یہ ایک بڑا اقدام نظر آتا ہے ۔سب سے بڑ امسئلہ سیاسی استحکام کا ہے ۔پاکستانی سیاست پر کئی عنصر غالب رہتے ہیں جن میں مذہب ، قبائل ، علاقے اور مغربی مداخلت بھی شامل ہے ۔حالیہ سالوں میں اس کی سیکورٹی کے حالات بھی بہت دگرگوں رہے ہیں ۔دوسرا بڑا رسک مہنگائی ہے ۔ جو گزشتہ چھ سالوں میں اوسطاً 11.6 فیصد سالانہ تک پہنچ چکی ہے ۔جس کا مطلب ہے کہ کسی بھی منصوبے پر اس کی لاگت کا تخمینہ اس کے منافع سے کئی گنا زیادہ ہو گا۔

Views All Time
Views All Time
166
Views Today
Views Today
1
Previous
Next

جواب دیجئے

%d bloggers like this: