ففٹی شیڈز آف گرین

Print Friendly, PDF & Email

qurat ul ain haiderبچپن میں انسان جتنا رنگوں اور تصویروں سےسیکھتا ہے شائد ہی کسی اور چیز سےسیکھتا ہو. اُنہی دنوں کی بات ہے جب میں اپنے ملک کے جھنڈے میں رنگ بھرتے ہوئے سوچتی تھی کے یہ جو سبز رنگ ہے اس میں، میری دوست سلمیٰ، تہمینہ، حرا اور میری کلاس کے سب مسلمان بچے آتے ہیں اورجو سفید ہے اس میں میری دوست انجلا، برکھا اور ان کے گھر والے آتے ہیں کیوں کے وہ کرسچن ہیں. ویسے تو قائد آعظم نے یہ ملک ہم مسلمانوں کے لئے بنایا تھا لیکن کیوں کے ان لوگوں نے بھی اس میں رہنا تھا اس لئے جھنڈے میں بھی ان کو الگ سے جگہ دے دی تاکہ سب ساتھ بھی رہ سکیں اور ہم اپنی مسجد میں جبکہ انجلا لوگ اپنے چرچ جا کر عبادت بھی کر سکیں اور ایسا ہی ہوتا رہا لیکن جیسے جیسے وقت گُزر تا گیا میرے اس نظریے میں ترمیم ہوتی گئی. سب سے پہلا جھٹکا تب لگا جب مجھے پتا چلا کے جھنڈے میں یہ جو سبز رنگ ہے یہ ایک نہیں ہے بلکہ اس کے بہت سارے شیڈز ہیں. اور سلمیٰ تہمینہ حرا اور میں ایک شیڈ میں نہیں آتے. اور اس کی وجہ یہ پتہ لگی کے کیونکہ ہم ایک جیسے مسلمان نہیں ہیں اس لئے میں جھنڈے کے اُس حصے میں نہیں آتی جہاں وہ لوگ ہیں . یہ بات اس عمر میں میرے لئے صدمے سے کم نہیں تھی.اگلا جھٹک تب لگا جب کچھ دوستوں نے احساس دلایا کے وہ جھنڈے کے جس حصے میں آتے ہیں وہ زیادہ گہرا ہے اور میں کیوں کے ان سے مختلف ہوں اس لئے میرے حصے میں ہلکا شیڈ آتاہے. یہ بتاتی چلوں کے گہرے رنگ میں آنے کا مطلب تھا کے وہ زیادہ اچھے مسلمان ہیں اور میں کم… یہ ایک اور صدمہ تھا . پھر سال میں کچھ دن ایسے بھی آتے جب میرے گھر میں کوئی خوشی نہیں منائی جاتی تھی یہاں تک کے سالگرہ بھی نہیں ان دنوں میں میرے دوست میرے سیاہ لباس پہ مجھے تنقید کا نشانہ بناتے تھے. کبھی کبھی رنگوں سے انسان کتنا کُچھ سیکھتا ہے نا.. پھر ایک دن فصیح الدین نے جو کے میری کلاس کا مانیٹر تھا باقی بچوں کو بتایا کہ جس جگہ میں جاتی ہوں اس کو امام بارگاہ کہتے ہیں اور وہاں باقی مسلمان نہیں جاتے بلکہ گندے مسلمان جاتے ہیں یہ بات اس کی امی نے اس کو بتائی تھی. اس دن کلاس کے بچوں کو دو باتیں پتا چلیں ایک یہ کے فصیح الدین سب سے ڈارک گرین شیڈ میں آتا تھا کیوں کہ وہ سب سے پکا مسلمان تھا اور دوسری یہ کے چونکہ میں ان سب سے مختلف تھی اس لئے میرا گرین شیڈ سب سے لائٹ ہے. میں نے جب یہ سب سنا تو پریشان ہوئی اور سوچا کے میں جھنڈے کی ڈارک سائیڈ سے ہوتے ہوتے اتنے لائٹ شیڈ میں آتی جا رہی ہوں کہیں ایسا نہ ہو کے ایک دن میری والی سائیڈ کا رنگ ہی ختم ہوجائے لیکن پھر ایک سوال پہ میرا دماغ رُک گیا اور وہ یہ تھا کہ ایسے تو جھنڈے کا حُلیہ ہی بدل جائے گا. اور پھر ایک دن وہی ہوا جس کا ڈر تھا . فرق یہ تھا کے یہ کلاس اسکول کی نہیں کالج کی تھی. اسلامیات کی کلاس میں ہونے والی ڈسکشن کے بعد باہر نکلے تو ایک لڑکی میرے پاس آئی اس کی صرف آنکھیں ہی نظر آرہی تھیں اس نے مجھ سے کچھ سوال پوچھے. لوگ نئے تھے لیکن سوال وہی پرانے چونکہ میں اسکول سے کالج آنے تک رنگوں کے مختلف شیڈ دیکھ چکی تھی لہذا میں سمجھ گئی کہ آج پھر سے کوئی رنگ مجھے کُچھ نیا سبق سکھانے جا رہا ہے. القصہ مختصر میرے جواب دینے پر اس لڑکی نے مجھے کہا کے میں کان کھول کر سن لوں کہ میرا اسلام سے کچھ لینا دینا نہیں ہے .میں نے پوچھا وہ کیسے؟ جواب ملا اس کی مسجد کے مولانا کا کہنا ہے کہ میرے جیسی فکر کے لوگ کافر ہیں میں نے پوچھا لیکن میں قرآن اور نماز پڑھتی ہوں کلمہ پڑھتی ہوں پھر بھی کافر ہوں ؟ اس نے کہا ہاں صرف کافر نہیں ہو تمہیں مارنے والے کو جنّت ملے گی میں نے پوچھا یہ بھی مولوی صاحب نے بتایا ہے کیا؟ اس نے کہا ہاں. اس دن مجھے فصیح الدیں کی امی اچانک ہی یاد آئیں تھیں. اسکول کے اس دن کی طرح آج پھر میں ایک عجیب کشمکش میں گھر پہنچی تھی. کھانا کھاتے ہوئے نگاہ ٹی وی پر گئی تو خبروں میں نماز جمعہ میں خودکش حملے کی فوٹیج چل رہی تھی. اور میری کشمکش ختم ہوچکی تھی. اس لڑکی کی بات حقیقت کے روپ میں میرے سامنے تھی اس کے مولانا کی فکر کے لوگوں نے میرے لوگوں کو کافر سمجھ کر مار ڈالا تھا. میں اس دن سمجھ گئی تھی کہ میں اس جھنڈے کے کسی سبز شیڈ میں کیوں نہیں آتی تھی…. کیونکہ میرا والا حصہ تو اُن لوگوں نے جنت کی لالچ میں سرخ کر دیا تھا. اور پھر یہ سلسلہ رکا نہیں دن بدن سرخی بڑھتی گی اور یہ سلسلہ اب بھی جاری ہے. پاکستان کا جھنڈا بنانے والوں نےتو سوچا بھی نہیں ہوگا کے ایک وقت آئے گا جب پاکستان میں یہ جھنڈا "out of Fashion” ہو جائے گا. مجھے قائد کو اطلاع دینی ہے کےاب یہاں مختلف شیڈز کے جھنڈے پائے جاتے ہیں اور مزے کی بات یہ کے جو اُس وقت آپکو کافراعظم کہتے تھے اب وہ آپ کے بنائے ہوئے ملک میں دندناتے پھر رہے ہیں. اقبال کے خواب کی تعبیر خون آلود ہوچکی ہے لیکن فِکر نہ کریں ایوانوں میں اور نوٹوں پر آپکی تصویر اب بھی لگی ہے. بس اس سے زیادہ کی امید اب نہ رکھئیے گا.
Rest in Peace!

Views All Time
Views All Time
2363
Views Today
Views Today
1
یہ بھی پڑھئے:   متحدہ مجلس عمل اور پاکستانی شیعہ

5 thoughts on “ففٹی شیڈز آف گرین

    • 16/08/2016 at 6:13 شام
      Permalink

      ! بہت شکریہ

      Reply
  • 16/08/2016 at 2:41 شام
    Permalink

    An excellent piece of writing. When I was reading this I felt some Tears in my eyes not because of the affects of the words but the reality of 70 years. Dark Red – Brown Red – Pinkish Red – deathly white – dead withe – and almost white. Green is green and its remain green because too much watering and cure is given to this color green. Magar Aik din ashkar ho ga k Jis Ko green smagha ja raha tha Wo Tu sirf aur sirf ankh Ka dokha tha.

    Reply
    • 16/08/2016 at 6:20 شام
      Permalink

      Thank you sir!
      I’m humbled by your words of appreciation.
      lastly in response to your comment i would like to say:
      جب وہ دن آے گا ہم کم ازکم خون بہانے والوں کی فہرست میں نہیں ہونگے
      ہمارا خون اس مٹی میں شامل ہے وہی ہمارے گواہی دے گا.

      Reply
    • 16/08/2016 at 6:25 شام
      Permalink

      Thank you sir!
      I’m humbled by your words of appreciation.
      lastly in response to your comment i would like to say :
      جب وہ دن آے گا ہم کم از کم خون بہانے والوں میں نہیں گنے جائیں گے
      اس مٹی میں ہمارا خون شامل ہے وہی ہماری گواہی دے گا.

      Reply

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

%d bloggers like this: